بہترین زندگی کے راز, نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


قوم سے التجا کرتا ہوں منرل واٹر پینا چھوڑ دو! چیف جسٹس نے بوتلوں کے پانی کا متبادل پیش کردیا

  جمعرات‬‮ 11 اکتوبر‬‮ 2018  |  14:49

اسلام آباد چیف جسٹس نے عوام سے منرل واٹر نہ پینے کی استدعا کر دی۔نجی ٹی وی کے مطابق سپریم کورٹ میں منرل واٹر کمپنیوں سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔دوران سماعت چیف جسٹس نے کہا کہ میں عوام سے التجا کرتا ہوں کہ منرل واٹر پینا بند کر دیں۔ نلکے کا پانی ابال کر پئیں ، اللہ کے فضل سے کچھ نہیں ہو گا۔چیف جستس نے کہا کہ منرل واٹر کمپنیاں زمین سے پانی نکال کر بوتلیں بھرتی ہیں۔

منرل واٹر کمپنیاں چھوٹی بوتل 32 روپے میں بیچ رہی ہیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ

کمپنیوں کا سالانہ منافع ایک ارب سے زائد ہے۔ چیف جسٹس نے اعتزاز احسن سے استفسار کیا کہ کیا آپ کو معلوم ہے کہ لاہور میں بورنگ کریں تو پانی کتنے فٹ پر آتا ہے۔جس پر اعتزاز احسن نے جواب دیا کہ جی 400 فٹ پر پانی آتا ہے۔چیف جسٹس نے کہا کہ اس سے نیچے پتھر اور چٹانیں ہیں جن سے پانی نہیں نکلتا۔آپ چاہتے ہیں کہ لاہور اور شیخوپورہ کا پانی سکھا دیں۔ منرل واٹر کمپنیاں مفت میں پانی بھرتی ہیں۔ لوگ بالٹیاں لے کر بیٹھے رہتےہیں لیکن نلکوں میں پانی نہیں آتا۔کل بھی 5 جعلی کمپنیاں پکڑی گئی ہیں۔

کئی بڑی کمپنیوں کا پانی بھی معیار کے مطابق نہیں ہے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ کمپنیاں فی لٹر کتنا پیسہ دینے کو تیار ہیں؟دنیا میں پانی کی قیمت کیاہے اس سے ہمیں کوئی غرض نہیں۔تمام کمپنیوں کو نوٹس جاری کر دیا تھا،آج جو حکم جاری ہوا وہ سب پر لاگو ہو گا۔ اب مفت میں پانی استعمال کرنے نہیں دیں گے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ اب منرل واٹر کمپنیوں کی ٹربائنز بند کر دیتے ہیں۔ پہلے نلکوں سے پانی بہہ رہا ہوتا تھا ، منرل واٹر کمپنیوں کی موٹروں کی وجہ سے نلکے خشک ہو گئے ہیں۔ منرل واٹر کمپنیاں اربوں گیلن استعمال کر کے اربوں روپے کما گئے اور بدلے میں عوام کو مہنگے پانی کے علاوہ کچھ نہیں ملا۔کمپنیوں کی اکثریت غیر معیاری پانی بیچ رہی ہے، اربوں گیلن کا پانی لیا اور لاکھوں روپے بھی نہیں لیے گئے۔

پانی بیچنے والی کوئی کمپنی پیسے نہیں دے رہی۔۔چیف جسٹس نے کہا کہ خدارا بوتلوں کا پانی نہ پئیں اور نلکے کا پانی ابال کر پئیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ منرل واٹر کمپنیاں پانی بطور خام مال استعمال کر رہی ہیں۔ کمپنیاں جائز منافع ضرور کمائیں لیکن پانی کی قیمت بھی ادا کریں۔

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎