بہترین زندگی کے راز, نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


برطرف ہونے والے اسلام آباد ہائیکورٹ کے سینئر جج شوکت عزیز صدیقی کا رد عمل سامنے آ گیا، انتہائی اہم بات کہہ ڈالی

  جمعہ‬‮ 12 اکتوبر‬‮ 2018  |  11:59

اسلام آباد سپریم جوڈیشل کونسل کی سفارش پر برطرف ہونے والے اسلام آباد ہائیکورٹ کے سابق سینئر جج شوکت عزیز صدیقی کا رد عمل سامنے آگیا، جس میں ان کا کہنا ہے کہ سپریم جوڈیشل کونسل کا میری معزولی کی سفارش کا فیصلہ غیرمتوقع نہیں،تقریباً تین سال پہلے سرکاری رہائش گاہ کی مبینہ آرائش کے نام پر بے بنیاد ریفرنس بنایا

گیا، سرکاری رہائش گاہ کی آرائش کے متعلق ریفرنس سے کچھ نہ ملا تو خطاب کو جواز بنا لیا ‘میرے مطالبے اور سپریم کورٹ کے واضح فیصلے کے باوجود یہ ریفرنس کھلی عدالت میں نہیں چلایا

گیا، نہ ہی میری تقریر میں بیان کیے گئے حقائق کو جانچنے کیلئے کوئی کمیشن بنایا گیا ، اپنا تفصیلی موقف بہت جلد عوام کے سامنے رکھوں گا۔جمعرات کو شوکت عزیز صدیقی نے سپریم جوڈیشل کونسل کی طرف سے اپنی معزولی کی سفارش پر فوری رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ میرے لیے یہ فیصلہ غیر متوقع نہیں۔

انہوں نے کہاکہ تقریبا” تین سال پہلے سرکاری رھائش گاہ کی مبینہ آرائش کے نام پہ شروع ہونے والے ایک بے بنیاد ریفرنس سے پوری کوشش کے باوجود جب کچھ نہ ملا ا تو ایک بار ایسوسی ایشن سے میرے خطاب کو جواز بنا لیا گیا جس کا ایک ایک لفظ سچ پر مبنی تھا ۔ میرے مطالبے اور سپریم کورٹ کے واضح فیصلے کے باوجود یہ ریفرینس کھلی عدالت میں نہیں چلایا گیا نہ ھی میری تقریر میں بیان کئے گئے حقائق کو جانچنے کے لئیے کوئی کمیشن بنایا گیا۔

میں اللہ کے فضل و کرم سے اپنے ضمیر اپنی قوم اور اپنے منصب کے تقاضوں کے سامنے پوری طرح مطمئن اور سرخرو ھوں ۔ انشااللہ اپنا تفصیلی موقف بہت جلد عوام کے سامنے رکھوں گا اور ان حقائق سے بھی آگاہ کروں گا جو میں نے اپنے تحریری بیان میں سپریم جوڈیشل کونسل کے سامنے رکھے تھے اور بتاوں گا کہ تقریبا” نصف صدی بعد ھائی کورٹ کے ایک جج کو اس طرح معزول کرنے کے حقیقی اسباب کیاہیں ۔

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎