بہترین زندگی کے راز, نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


ﻣﺮﺩﮦ ﻣﺮﻏﯿﺎﮞ اور ایک بزرگ

  جمعہ‬‮ 9 ‬‮نومبر‬‮ 2018  |  2:40

قرآن میں کھانا کھلانے کی اہمیت وتاکید کچھ اس طرح بیان فرمائی ہے محتاجوں،غریبوں ، یتیموں اور ضرورت مندوں کی مدد، معاونت ، حاجت روائی اور دلجوئی کرنا دین اسلام کا بنیادی درس ہے جو نبی کریم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے عملی مظاہرہ کر کے اپنی امت کو بتایا مگر افسوس کہ ہم مسلمان تو ہیں مگر سرور کائنات محمد

رسول اللہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی تعلیمات پر عمل کرنے سے قاصر ہیں جو آج معاشرے کی تباہی کا باعث ھے. آج میرا موضوع بھی کچھ ایسا ہی ھے ایک مسلمان بھائی نے ایک واقعہ

بیان کیا ھے جسکو چند ترامیم کے ساتھ آپ کے سامنے پیش کررہا ھوں امید عمل کے ساتھ کہ اللہ پاک مجھے اور آپکو انسانوں کی فلاح کے لیے قبول فرما ۓ آمین..... وَيُطْعِمُونَ الطَّعَامَ عَلَى حُبِّهِ مِسْكِينًا وَيَتِيمًا وَأَسِيرًااور وہ اللہ کی محبت کی خاطر مسکینوں ، یتیمو اور قیدیوں کو کھانا کھلاتے ہیں۔(سورہ دھر 8)مَا سَلَكَكُمْ فِي سَقَرَ (42) قَالُوا لَمْ نَكُ مِنَ الْمُصَلِّينَ (43) وَلَمْ نَكُ نُطْعِمُ الْمِسْكِينَ (44)کہ : تمہیں کس چیز نے دوزخ میں داخل کردیا؟

وہ کہیں گے کہ : ہم نماز پڑھنے والوں میں سے نہیں تھے ۔ اور ہم مسکین کو کھانا نہیں کھلاتے تھے۔(المدثر 42-44)وَلَا يَحُضُّ عَلَى طَعَامِ الْمِسْكِينِ (3) الماعوناور محتاج کو کھانا کھلانے کی ترغیب نہیں دیتا (یعنی معاشرے سے غریبوں اور محتاجوں کے معاشی استحصال کے خاتمے کی کوشش نہیں کرتا)میرے اللہ رب العزت کا ارشاد ہے:”جوکھانا کھلاتے ہیں اللہ کی محبت میں مسکین ،یتیم اورقیدی کو۔(اورکہتے ہیں )ہم تمہیں کھلاتے ہیں اللہ کی رضاءکے لیے ،نہ ہم تم سے کسی اجر کے خواہاں ہیں اورنہ شکریہ کے۔ہم ڈرتے ہیں اپنے رب سے اس دن کے لیے جو بڑا ترش (اور)سخت ہے“۔(سورة الدھر:۱۰،۹،۸) حضرت عبداللہ بن عمرو رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ایک شخص نے جناب رسالت مآب صلی اللہ علیہ وسلم سے دریافت کیا :

اسلام میں سب سے بہتر عمل کونسا ہے ،آپ نے ارشادفرمایا:کھانا کھلانا اورہر ایک کو سلا م کرنا خواہ اس سے تمہاری جان پہچان ہو یا نہ ہو۔(صحیح بخاری)حضرت جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم ارشادفرماتے ہیں کسی فاقہ زدہ مسلمان کو کھانا کھلانا مغفرت کو واجب کردینے والے اعمال میں سے ایک ہے۔(بیہقی )ﻣﯿﺮﯼ ﺑﯿﭩﺎﮞ ﺟﺐ ﺳﮯ سرگودھا ﺁﺋﮯ ﮨﯿﮟ ﺭﻭﺯ ﺑﻮﻟﺘﯽ ﮨﯿﮟ.ﺍﺑﻮ ﺁﺝ ﮔﻮﺷﺖ ﻻﺋﯿﮟ ﺍﺑﻮ ﺁﺝ ﻣﺮﻏﯽ ﭘﮑﺎﺋﯿﮟ .ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺁﺝ ﻓﺎﺭﻡ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﺎﺯﮦ ﻣﺮﺩﺍﺭ ﻣﺮﻏﯿﺎﮞ ﭘﮭﻨﮑﺘﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺳﻮﭼﺎ ﺁﺝ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﭽﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﻭﮞ ﮔﺎ ﺍﻧﮑﻮ ﮐﯿﺎ ﺧﺒﺮ ﺑﺲ ﺧﻮﺵ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﯽ .ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﮦ ﺁﺩﻣﯽ ﺭﻭﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﮨﻢ ﺳﺐ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺁﻧﺴﻮ ﻧﮑﻞ ﮔﺌﮯ بڑي عبرت هے اس واقعه ميں هم كمزور ايمان والوں كيلۓ،،،

اللہ کے واسطے اس درد کو محسوس کیجئے....کچھ دن پہلے ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﺍﯾﮏ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮐﺎﻡ ﺳﮯ میانوالی ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﺗﻔﺎﻕ ﮨﻮﺍ ﭼﻨﺎﭼﮧ بندیال ﮐﯽ ﻣﯿﭩﺮﻭ ﮐﯿﺮﯼ ﺳﺮﻭﺱ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮫ ﮐﺮ ﺭﻭﺍﻧﮧ ﮨﻮ گیا.ﺟﻮﻧﮩﯽ سرگودھا ﮐﮯ پہاڑوں کی ﻣﻮﮌﻭﺍﻟﯽ ﭼﮍﮬﺎﺋﯽ ﭼﮍﮬﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﮩﺮﺍﻡ ﻣﭽﺎ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ ﺩﻝ ﺩﮬﮏ ﺩﮬﮏ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﺳﺐ ﺧﯿﺮ ﮐﯽ ﺩﻋﺎﺋﯿﮟ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﺭﻭﮈ ﺑﻼﮎ ﺗﮭﺎ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﮔﺎﮌﯼ ﺑﮭﯽ ﺭﮎ ﮔﺌﯽ .ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺳﺐ ﻣﺮﺩ ﺣﻀﺮﺍﺕ ﺍﺗﺮ ﮔﺌﮯ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮧ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ؟ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﺳﺐ لوﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ساٹھ ﺳﺎﻟﮧ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﺳﮯ ﺁﺩﻣﯽ ﮨﺮ ﺗﮭﭙﮍﻭﮞ ﮐﯽ ﺑﺎﺭﺵ ﮨﮯ اور ﻭﺟﮧ ﯾﮧ ﺑﺘﺎﺋﯽ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ

ﮐﮧ ﯾﮧ ﺁﺩﻣﯽ ﻣﺮﺩﮦ ﻣﺮﻏﯿﺎﮞ ﺟﻮ ﮐﮧ ﺍﮐﺜﺮ ﭘﻮﻟﭩﺮﯼ ﻓﺎﺭﻣﺰ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﺱ ﻣﻮﮌ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻧﺎﻟﮯ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﯿﻨﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻟﮯ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﭽﺘﺎ ﮨﮯ ﺁﺝ ﺭﻧﮕﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﭘﮑﮍﺍ ﮔﯿﺎ .ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﺍﯾﮏ تھیلے ﻣﯿﮟ ﺩﻭ ﭼﮭﯿﻠﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﻣﺮﻏﯿﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﭘﮍﯼ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﯾﮏ ﭼﺎﺩﺭ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺷﺎﯾﺪ ﺍﺳﯽ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﮔﺎﮌﯼ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺟﺐ ﯾﮧ ﺳﺐ ﮐﭽﮫ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﻃﺮﺡ ﻃﺮﺡ ﮐﯽ ﻟﻌﻦ ﻃﻌﻦ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ .ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﺑﻨﺪﮦ ﻧﻢ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﺑﺖ ﺑﻨﺎ ﺭﮨﺎ .ﺑﻶﺧﺮ ﺟﺴﻤﺎﻧﯽ ﮐﻤﺰﻭﺭﯼ ﺍﻭﺭﻋﻤﺮ ﮐﺎ ﻟﺤﺎﻅ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭼﻨﺪ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺭﺍﺋﮯ ﭘﺮ ﺍﺳﮑﻮ ﻣﺸﺘﻌﻞ ﮨﺠﻮﻡ ﻧﮯ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ .

ﺍﺗﻔﺎﻕ ﺳﮯ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﮔﺎﮌﯼ ﻣﯿﮟ ﺩﻭ ﺳﻮﺍﺭﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺟﮕﮧ ﺧﺎﻟﯽ ﺗﮭﯽ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺁ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮫ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﮔﺎﮌﯼ ﭼﻞ ﭘﮍﯼ .ﮔﺎﮌﯼ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﺍﺩﮬﯿﮍ ﻋﻤﺮ ﻋﻮﺭﺕ ﺍﻭﺭ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﺳﻤﯿﺖ ﮨﻢ کافی ﺁﺩﻣﯽ ﺗﮭﮯ .ﻟﻮ ﺟﯽ ﺍﺩﮬﺮ ﺑﮭﯽ ﻭﮨﯽ ﮈﺳﮑﺸﻦ ﺍﻭﺭ ﻟﻌﻦ ﻃﻦ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ سرگودھا ہوٹل ﻣﯿﮟ ﺑﮑﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺯﺑﺢ ﻣﺮﻏﯽ ﮐﻮ ﻣﺮﺩﺍﺭ ﻣﺮﻏﯽ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ . خوشاب ﻣﯿﮟ .ﮐﭽﮫ ﻧﮯ ﺑﺮﺍ ﺑﮭﻼ ﮐﮩﺎ ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﺗﻮ ﺑﺮﺍﮦ ﺭﺍﺳﺖ ﺍﺱ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﻮ ﻣﺨﺎﻃﺐ ﮐﺮ ﮐﮯ ﮐﮩﺎ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺷﺮﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﯽ ﯾﮧ ﻣﺮﺩﺍﺭ ﻣﺮﻏﯽ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﯿﭻ ﮐﮯ ﺣﺮﺍﻡ ﮐﺎ ﭘﯿﺴﮧ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﮭﻼﺗﮯ ﮨﻮ ﺗﻤﮭﺎﺭﺍ ﺿﻤﯿﺮ ﮐﺒﮭﯽ ﻣﻼﻣﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﺎ ؟ﺍﺱ ﺑﻨﺪﮮ ﻧﮯ ﺳﺮ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ سرائیکی ﻣﯿﮟ ﻣﺨﺎﻃﺐ ﮨﻮ ﮐﺮ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﮐﮧ ﺗﻢ ﮐﯿﻮﮞ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﮨﻮ

ﺳﻨﺎﺅ ﮐﭽﮫ ﺗﻢ ﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﺑﮭﯽ ﺩﮮ ﺩﻭ ﮔﺎﻟﯿﺎﮞ .ﻣﯿﮟ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﺷﺸﺪﺭ ﮨﻮﺍ ﭘﮭﺮ ﺑﻮﻻ ﺑﻨﺎ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﮐﮯ ﺳﻨﯽ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﻭﺍﻭﯾﻼ ﮐﺮﻧﺎ ﺍﭼﮭﯽ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ .ﮔﺎﮌﯼ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺑﺎﻗﯽ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﻦ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﯾﻘﯿﻨﺎً ﺩﻝ ﮨﯽ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﮨﻨﺲ ﺭﮨﮯﮨﻮﮞ ﮔﮯﺍﻭﺭ ﮐﮧ ﺭﮨﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﮐﮧ " ﺍﺱ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﺑﮍﺍ ﺁﯾﺎ ﺳﯿﺎﻧا "ﺍﺱ ﺑﻨﺪﮮ ﻧﮯ ﺟﻮ ﻣﯿﺮﯼ ﻧﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﺑﮭﯽ ﻣﻠﺰﻡ ﺳﮯ ﻣﺠﺮﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎﻭﮦ ﺑﻨﺪﮦ ﺭﻭ ﭘﮍﺍ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﺗﻢ ﮔﻮﺍﮦ ﺭﮨﻨﺎ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﮐﮯ ﺩﻥ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﭘﯿﺶ ﮨﻮﻧﮕﺎ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﮨﻮﻧﮕﮯ ﺟﺲ ﺟﺲ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺎﺭﺍ ﺟﺲ ﺟﺲ ﻧﮯ ﮔﺎﻟﯽ ﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﺍ ﮨﺎﺗﮫ ﮨﻮﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮑﺎ ﮔﺮﯾﺒﺎﻥ ﮨﻮﮔﺎ ۔۔۔

میں حضور اکرم (ص) کو شکوہ کروں گا ۔۔ آپکے ﺍﻣﺘﯿﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﻨﺎ ﭘﻮﭼﮭﮯ ﺑﻨﺎ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﮐﺌﮯ ﺻﺮﻑ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺮﺩﺍﺭ ﻣﺮﻏﯿﺎﮞ ﭼﮭﯿﻞ ﮐﺮ ﺗﮭﯿﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻟﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺩ ﮨﯽ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺑﯿﭽﻨﮯ ﮐﺎ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﻟﮕﺎ ﮐﺮ ﻣﺎﺭﺍ ﮔﺎﻟﯿﺎﮞ ﺩﯼ .ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﭘﻮﺭﯼ ﮔﺎﮌﯼ ﮐﮯ ﻣﺴﺎﻓﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﻣﺨﺎﻃﺐ ﮨﻮ ﮐﺮ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﺑﮭﺎﺋﯿﻮ ! ﻣﯿﮟ جوہر آباد ﮐﺎ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﺮﺍ ﺍﭘﻨﺎ ﺷﻮﺭﻭﻡ ﺗﮭﺎ ﺗﯿﻦ ﺳﺎﻝ ﺳﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﻠﮉ ﮐﯿﻨﺴﺮ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺳﺐ ﮐﭽﮫ ﺑﯿﭻ ﮐﺮ ﻋﻼﺝ ﭘﺮ ﻟﮕﺎ ﺩﯾﺎ ﮨﺮ ﻣﮩﻨﮯ ﺩﻭ ﺑﻮﺗﻞ ﺧﻮﻥ ﺑﮭﯽ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﮨﻢ ﺩﻭ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮨﯿﮟ ﺟﺐ ﻣﺠﮫ ﭘﺮ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮐﺎ ﻗﺮﺽ ﭼﺎﺭ ﻻﮐﮫ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﻧﮯ ﻣﺰﯾﺪ ﻗﺮﺽ ﺩﯾﻨﮯ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﯿﺴﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﻣﺎﻧﮕﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻣﮑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﺎ ﺣﺼﮧ ﻗﺮﺽ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﮑﻮ ﺩﮮ ﺩﯾﺎ .

ﭼﺎﺭ مہینے ﺳﮯ سرگودھا ﻣﯿﮟ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﺮﯼ ﭼﺎﺭ ﺑﯿﭩﯿﺎﮞ ﮨﯿﮟ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﯼ ﺑﯿﭩﯽ ﺳﺎﺕ ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﮨﮯﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﮐﻤﺰﻭﺭﯼ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ ﮐﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﭘﯿﺴﮯ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﮭﯿﮏ ﻣﺎﻧﮕﻨﺎ ﻟﻌﻨﺖ ﮨﮯ .ﺩﻭ ﻣﺎﮦ ﺳﮯ ﺧﻮﻥ ﮐﯽ ﺑﻮﺗﻠﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺑﮭﯽ ﭘﯿﺴﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻔﯿﺪ ﭘﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﭼﻞ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﮔﺎﮌﯼ .ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﺳﺎ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﺭﻭ ﭘﮍﺍ ﺍﻭﺭ ﺁﻧﺴﻮ ﺻﺎﻑ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﻮﻻ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﯿﭩﺎﮞ ﺟﺐ ﺳﮯ سرگودھا ﺁﺋﮯ ﮨﯿﮟ ﺭﻭﺯ ﺑﻮﻟﺘﯽ ﮨﯿﮟ" ککڑ گھن آؤ ابا سائیں ککڑ پکاسوں "ﺍﺑﻮ ﺁﺝ ﮔﻮﺷﺖ ﻻﺋﯿﮟ ﺍﺑﻮ ﺁﺝ ﻣﺮﻏﯽ ﭘﮑﺎﺋﯿﮟ .

ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺁﺝ ﻓﺎﺭﻡ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﺎﺯﮦ ﻣﺮﺩﺍﺭ ﻣﺮﻏﯿﺎﮞ ﭘﮭﻨﮑﺘﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺳﻮﭼﺎ ﺁﺝ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﭽﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﻭﮞ ﮔﺎ ﺍﻧﮑﻮ ﮐﯿﺎ ﺧﺒﺮ ﺑﺲ ﺧﻮﺵ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﯽ .ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﮦ ﺁﺩﻣﯽ ﺭﻭﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﮨﻢ ﺳﺐ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺁﻧﺴﻮ ﻧﮑﻞ ﮔﺌﮯ .ﻭﮦ ﺑﺎﮨﺮ ﮐﯽ ﻣﺎﺭ ﺍﻭﺭ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﮯ ﺷﮑﺎﺭ ﺳﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺟﻼ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ .ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﺟﮭﻮﻟﯿﺎﮞ ﺑﮭﺮ ﺑﮭﺮ ﻣﺎﺭﻧﮯ ﺍﻭﺭﮈﺍﻧﭩﻨﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﺪﻋﺎﺋﯿﮟ ﺩﯾﻨﮯ ﻟﮕﺎ .ﺳﺐ ﻧﮯ ﻣﻨﺘﯿﮟ ﮐﯽ ﻣﻌﺎﻓﯿﺎﮞ ﻣﺎﻧﮕﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺳﮑﺎ ﺭﻭﻧﺎ ﺑﻨﺪ ﻧﮧ ﮨﻮﺍ .ﻻﺭﯼ ﺍﮈﺍ ﺁ ﮔﯿﺎ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﺳﻤﯿﺖ ﺳﺐ ﻧﮯ ﺟﯿﺐ ﻣﯿﮟ ﮨﺎﺗﮫ ﮈﺍﻻ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﮨﺎﺗﮫ ﺁﯾﺎ ﺍﺳﮑﻮ ﺩﯾﻨﺎ ﭼﺎﮨﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﻣﻨﮧ ﭘﺮ ﺩﮮ ﻣﺎﺭﺍ .ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﻧﺎﻡ ﺍﻭﺭ ﭘﺘﮧ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﻭﮦ ﺑﻮﻻﺑﮭﻮﮐﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﺎﻡ ﻗﻮﻡ ﯾﺎ ﻣﺬﮨﺐ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ..!!

ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﮍﻭﺱ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﮈﮬﻮﻧﮉﯾﺌﮯ ﺟﻮ ﺳﻔﯿﺪ ﭘﻮﺷﯽ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﭧ ﮔﮭﭧ ﮐﺮ ﺟﯽ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ . ﯾﮧ ﻧﮧ ﮨﻮ ﮐﻞ ﺭﻭﺯ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﮨﻤﯿﮟ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻭﺭ ﺭﺳﻮﻝ(ص) ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﻧﺪﺍﻣﺖ ﺍﭨﮭﺎﻧﯽ ﭘﮍےپیارے دوستو یہ واقعہ لکھنے کا مقصد صرف اتنا ہے کہ فیس بک پر کئی بار ایک پوسٹ نظر سے گزری ۔۔۔ اس کا اصل مطلب مجھے آج سمجھ آیا کہجب سننے والا سن کر ۔۔۔

دیکھنے والا دیکھ کر ۔۔۔ اور سہنے والا سہہ کر خاموش ہوجائے تو سمجھ لواس کا معاملہ اللہ کی عدالت میں پہنچ گی..!!یہ سچائی اگر کسی کو بُری لگی ہو تو معزرت وسلام ۔۔۔یہ کہانی محض کہانی نہیں آج کل ایسا ہو رہا ہے۔۔میں نے تصویر دکھائی ہے۔۔اگر میری کسی بات یا عمل سے کسی بھائی بہن کو کچھ ناگوار گزرا ہو توان سے نہایت ادب و احترام سے معذرت .🌻جزاك اللہ

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎