بہترین زندگی کے راز, نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


ﺑﯿﭩﺎ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺭﺷﺘﮧ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﭘﮭﭙﻮ ﮐﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺳﻮﭼﺎ ﮨﮯ

  جمعرات‬‮ 6 دسمبر‬‮ 2018  |  19:08

(ﻓﯿﺼﻞ ﻓﺮﺿﯽ ﻧﺎﻡ) ﮐﯽ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﻧﮯ ﻓﯿﺼﻞ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ ﺍﻣﯽ ﺗﺎﺑﻌﺪﺍﺭﯼ ﺳﮯ ﺳﺮ ﺟﮭﮑﺎﻟﯿﺎ، ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺑﺎﺕ ﭼﯿﺖ ﮨﻮﮔﺊ، ﺭﺷﺘﮧ ﻃﮯ ﭘﺎﮔﯿﺎ ﺷﺎﺩﯼ ﺩﻭ ﺳﺎﻝ ﺑﻌﺪ ﮨﻮﻧﺎ ﻗﺮﺍﺭ ﭘﺎﺋﯽ ﺍﺱ ﻋﺮﺻﮯ ﻣﯿﮟ، ﻓﯿﺼﻞ ﺟﻮ ﮐﮧ ﺍﭼﮭﯽ ﺟﺎﺏ ﺗﻮ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﮨﯽ ﭘﺮ ﮔﮭﺮ ﮐﺮﺍﺋﮯ ﮐﺎ ﺗﮭﺎ، ﺍﺭﺍﺩﮦ ﺍﻣﯿﺪ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺷﺎﺩﯼ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﺮﺍﺋﮯ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺟﺎﻥ ﭼﮭﻮﭦ ﺟﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﻣﯿﮟ ﺑﻔﻀﻞ اللہ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﮔﯿﺎ، ﺳﺴﺮﺍﻝ ﺳﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﺑﺎﺅ ﺑﮍﮬﻨﮯ ﻟﮕﺎ ،

ﺑﮩﺮﺣﺎﻝ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﻃﮯ ﮨﻮﮔﺊ، ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﮔﮭﺮﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﻣﺪ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﻗﺮﺽ ﺗﮭﺎ

ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺩﻭﺭ ﺣﺎﺿﺮ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺷﺎﺩﯼ ﺩﮬﻮﻡ ﺩﮬﺎﻡ ﺳﮯ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﺎ ﺗﻘﺎﺿﮧ، ﻓﯿﺼﻞ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺧﯿﺮﯾﺖ ﻭ ﺳﺎﺩﮔﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﻨﺖ ﭘﺮ ﻋﻤﻞ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ، ﻓﯿﺼﻞ ﮐﯽ ﯾﮧ ﺳﻮﭺ ﮐﮧ ﺳﺎﺩﮔﯽ ﺳﮯ ﻧﮑﺎﺡ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ ﺑﻨﺎ ﮐﭽﮫ ﺟﮩﯿﺰ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﮯ ﺳﺴﺮﺍﻝ ﮐﮯ ﺗﻘﺎﺿﻮﮞ ، ﺁﻧﮯ ﺑﮩﺎﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺑﺘﺎﻧﺎ ﺑﺎﺭﺍﺕ ﮐﯿﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﺘﻨﯽ ﺷﺎﻧﺪﺍﺭ ﺁﺋﮯ، ﺑﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮐﯿﺎ ﮨﻮ، ﺷﺎﺩﯼ ﻭ ﻭﻟﯿﻤﮧ ﮐﮯ ﺩﻟﮩﻦ ﮐﮯ ﺟﻮﮌﮮ ﮐﺴﯽ ﺑﻮﺗﯿﮏ ﺳﮯ ﮨﯽ ﻟﯿﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﮨﻮﮔﺊ ﺗﺐ ﻏﻮﺭ ﮐﯿﺎ ﺟﮩﯿﺰ ﺗﻮ ﯾﻮﮞ ﮨﯽ ﺑﺪﻧﺎﻡ ﮨﮯ ﺑﺮﯼ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﺍﭼﮭﺎ ﺧﺎﺻﺎ ﺳﻮﺩﺍ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﻟﮍﮐﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﮨﺮ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻣﻈﻠﻮﻡ ﺑﻨﺎ ﮐﺮ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﺻﻞ ﻣﻈﻠﻮﻡ ﺗﻮ ﺑﮯ ﭼﺎﺭﮦ ﻟﮍﮐﺎ ﮨﮯ

ﮐﺒﮭﯽ ﯾﮧ ﺳﻮﭼﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ 25 ، 30 ﮨﺰﺍﺭ ﮐﯽ ﺳﯿﻠﺮﯼ ﻟﯿﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﻟﮍﮐﺎ، ﮔﮭﺮ ﺑﻨﺎﺋﮯ، ﺍﭘﻨﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﮮ، ﺍﭘﻨﯽ ﺑﮩﻨﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﺎﺩﯾﺎﮞ ﮐﺮﮮ،، ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺕ ﻣﯿﺮﯼ ﻭﮨﯽ ﭘﺮﺍﻧﯽ ﺑﮩﻨﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺁﭨﮫ، ﻧﻮ ﺗﮏ ﮨﻮﺳﮑﺘﯽ ﮨﯿﮟ ...ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺭﻣﺎﻥ ﺗﮭﻮﮌﮮ ﮐﻢ ﮐﺮﯾﮟ، ﺳﻮﭺ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮨﻢ ﮨﯽ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﺎ ﺷﺨﺺ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﺴﯽ ﺳﻮﭺ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮧ ﺭﮐﮭﮯ ﮐﮧ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﺳﭩﯿﺒﻠﺸﻤﻨﭧ ﭘﻠﺲ ﺑﮩﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺟﮩﯿﺰ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻣﺪﺩ ﻣﻞ ﺟﺎﺋﮯ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺧﻮﺩ ﮐﺎ ﮨﯽ ﻗﺼﻮﺭ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺳﻮﭺ ﻟﮍﮐﻮﮞ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻟﮍﮐﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺎﺅﮞ ﮐﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ .

ﻧﮧ ﺁﺝ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﻮ ﺟﮩﯿﺰ ﮐﻢ ﺩﯾﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﻧﮧ ﺑﮩﻮ ﮐﮯ ﺟﮩﯿﺰ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﯽ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﺳﺐ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﻭﮞ ﺗﺐ ﺑﮭﯽ %80 ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﯽ ﮨﮯ ،ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﻮ ﻣﺸﮑﻞ ﺁﺝ ﮐﮯ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻣﺸﮑﻞ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻟﮍﮐﮯ ﻟﮍﮐﯽ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮨﯿﮟﻭﮦ ﻏﺮﯾﺐ ﮨﮯ،ﻧﻮﮐﺮﯼ ﭘﮑﯽ ﻧﮩﯿﮟ، ﮔﮭﺮ ﺍﭘﻨﺎ ﻧﮩﯿﮟ، ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺑﺮﺍﺩﺭﯼ ﮐﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﭨﮭﯿﮏ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﯽ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﻣﯿﮟ، ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﻧﮩﯿﮟ، ﻟﻤﺒﯽ ﻧﮩﯿﮟ، ﻟﻤﺒﯽ ﺑﮩﺖ ﮨﮯ، ﮨﻨﺴﺘﯽ ﺑﺮﮮ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﮯ ﮨﮯ، ﻧﺨﺮﮮ ﺑﮩﺖ ﮨﯿﮟ،ﯾﮧ ﺳﺐ ﺧﻮﺑﯿﺎﮞ ﺧﺎﻣﯿﺎﮞ ﺑﺘﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺧﻮﺩ ﻣﺎﮞ ﺑﺎﭖ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ،

ﺍﺱ ﻓﺮﻣﺎﻥ ﺳﮯ ﺑﮯ ﮔﺎﻧﮧ ﮨﻮﮐﺮ ﮐﮧ ﻧﮑﺎﺡ ﻣﺤﺒﺖ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ . ﺍﻭﺭ ﻧﺼﯿﺐ ﺭﺏ ﺍﻟﻌﺎﻟﻤﯿﻦ ﺑﻨﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺳﻮﭺ ﺑﺪﻟﯿﮟ ﻭﺭﻧﮧ ﭼﻮﺗﮭﯽ ﮐﻼﺱ ﺳﮯ ﻟﯿﮑﺮ ﺁﭨﮭﻮﯾﮟ ﮐﻼﺱ ﺗﮏ ﮐﮯ ﺑﭽﮯ Love letters ﻟﮑﮭﻨﮯ، ﻣﯿﭩﺮﮎ ﮐﮯ ﺑﭽﮯ ﺧﻮﺩ ﮐﺸﯽ، ﮐﺎﻟﺞ ﮐﮯ ﮈﯾﭧ ﭘﺮ ﺟﺎﻧﮯ، ﺍﻭﺭ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯿﯿﺰ ﮐﮯ ﭼﻮﺭ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﮈﮬﻮﻧﮉﻧﮯ ﺗﻮ ﻟﮓ ﮔﺌﮯ ﮨﯿﮟ ﭘﮭﺮ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﯽ ﺍﺱ ﺧﺮﺍﺑﯽ ﮐﺎ ﺭﻭﻧﺎ، ﺭﻭﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﻮﮌﺩﯾﮟ... اللہ ﮐﺮﮮ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﺎﺕ ﺩﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﺮ ﺟﺎﺋﮯ..!!

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎