Android AppiOS App

بہترین زندگی کے راز, اسپیشل نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


ﺑﺎﻭﺭﭼﯽ

  پیر‬‮ 11 فروری‬‮ 2019  |  13:22

ﺍﻭﺭﻧﮓ ﺯﯾﺐ ﻋﺎﻟﻤﮕﯿﺮ ایک درویش صفت بادشاہﺍﻭﺭﻧﮓ ﺯﯾﺐ ﻋﺎﻟﻤﮕﯿﺮؒ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﯾﮏ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﻭﺭﭼﯽ ﺁﯾﺎ۔ ﺗﺎ ﮐﮧ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﺎ ﺑﺎﻭﺭﭼﯽ ﺑﻨﻮﮞ ﮔﺎ ﺗﻮ ﺧﻮﺏ ﻣﯿﺮﮮ ﻭﺍﺭﮮ ﻧﯿﺎﺭﮮ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺗﻮ ﭨﻮﭘﯿﺎﮞ ﺳﯿﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻗﺮﺁﻥ ﻣﺠﯿﺪ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺁﻣﺪﻧﯽ ﺳﮯ ﺗﮭﻮﺭﯼ ﺳﯽ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﮭﺎ ﻟﯿﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺑﯿﺖ ﺍﻟﻤﺎﻝ ﮐﺎ ﭘﯿﺴﮧ ﮨﺮﮔﺰ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﯿﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﮐﺴﯽ ﺑﺰﺭﮒ ﮐﮯ ﺻﺤﺒﺖ ﯾﺎﻓﺘﮧ ﺗﮭﮯ۔ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﺠﺪﺩ ﺍﻟﻒ ﺛﺎﻧﯽ ﺭﺣﻤﺘﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺻﺎﺟﺰﺍﺩﮮ ﮐﮯ ﺻﺤﺒﺖ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺑﮍﮮ ﺩﺭﻭﯾﺶ ﺻﻔﺖ ﺗﮭﮯ ﺍﮔﺮﭼﮧ ﻭﻗﺖ ﮐﮯ

ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺗﮭﮯ۔ ﮔﮭﺮ

ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺑﺲ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺳﯽ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﭽﮭﮍﯼ ﺑﻦ ﺟﺎﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﻭﮨﯽ ﮐﮭﺎ ﻟﯿﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺏ ﯾﮧ ﺑﺎﻭﺭﭼﯽ ﺗﻨﮓ ﺁ ﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﯾﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﮐﯿﺴﮯ ﺟﺎﻥ ﭼﮭﮍﺍﺅﮞ۔ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺗﺮﮐﯿﺐ ﺳﻮﭼﯽ۔ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻧﻤﮏ ﭨﮑﺎ ﮐﮯ ﮈﺍﻝ ﺩﯾﺎ ﻣﮕﺮ ﮐﯿﺎ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺳﻼﻣﺖ ﺁﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺁﺭﺍﻡ ﺳﮯ ﮐﮭﺎ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﺎ۔ ﻭﮦ ﺑﮍﺍ ﺣﯿﺮﺍﻥ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﮐﮩﺎ، ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﻧﮑﺎﻝ ﺩﯾﻨﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ ﺗﮭﺎ۔ ﺧﯿﺎﻝ ﺁﯾﺎ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺷﺎﺋﺪ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻧﻤﮏ ﮐﺎ ﭘﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﻠﺘﺎ ﺍﻧﮑﯽ ﻃﺒﯿﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻧﻤﮏ ﭘﺴﻨﺪ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﮔﻠﮯ ﺩﻥ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻧﻤﮏ ﮈﺍﻻ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﮐﮭﺎ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﮐﮩﺎ ﺍﻭﺭ ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ۔ ﯾﮧ ﺑﮍﺍ ﺣﯿﺮﺍﻥ ﮨﻮﺍ۔ ﺗﯿﺴﺮﮮ ﺩﻥ ﺍﺱﻧﮯ ﻧﺎﺭﻣﻞ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺑﻨﺎﯾﺎ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮭﺎ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﻭﺭﭼﯽ ﮐﻮ ﭘﺎﺱ ﺑﻼ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ﺑﮭﺌﯽ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﻧﻤﮏ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﮭﺎ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﻧﻤﮏ ﺑﻠﮑﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ، ﺁﺝ ﻧﻤﮏ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﮨﮯ۔

ﺁﭖ ﺍﯾﮏ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﻣﺘﻌﯿﻦ ﮐﺮ ﻟﺌﺠﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺗﻨﺎ ﻧﻤﮏ ﺭﻭﺯﺍﻧﮧ ﮈﺍﻝ ﺩﯾﺎ ﮐﺮﯾﮟ ﺗﺎ ﮐﮧ ﺗﻤﮭﯿﮟ ﭘﮑﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺁﺳﺎﻧﯽ ﮨﻮ۔ ﺍﺱ ﺑﺎﻭﺭﭼﯽ ﻧﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﺟﻮﮌ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ : ﺣﻀﺮﺕ ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﭼﮭﭩﯽ ﻣﻞ ﺟﺎﺋﮯ، ﻣﮕﺮ ﺁﭖ ﺗﻮ ﺍﯾﺴﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﭘﺮ ﺍﻋﺘﺮﺍﺽ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺍﻭﺭﻧﮓ ﺯﯾﺐ ﻋﺎﻟﻤﮕﯿﺮؒ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺍﭼﮭﺎ ﺗﻤﮭﯿﮟ ﺩﻧﯿﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ، ﺗﻤﮭﯿﮟ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﻞ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﭨﮑﮍﺍ ﺑﭽﺎ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﻓﻼﮞ ﮐﻮ ﺟﺎ ﮐﮯ ﮨﺪﯾﮧ ﺩﮮ ﺩﯾﻨﺎ۔ ﻭﮦ ﺍﺱ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﮯ ﭨﮑﮍﮮ ﮐﻮ ﻟﮯ ﮐﺮ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﻮ ﮨﺪﯾﮧ ﺩﮮ ﺩﯾﺎ۔ ﻭﮦ ﺑﺪﻧﮧ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﻭﮦ ﺧﻮﺵ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺳﻼﻣﺖ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﮨﺪﯾﮧ ﺑﮭﯿﺠﺎ۔ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻻﮐﮭﻮﮞ ﺩﯾﻨﺎﺭ ﺍﺱ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﻮ ﺗﺤﻔﮧ ﻣﯿﮟ ﺩﮮ ﺩﺋﯿﮯ ﮐﮧ ﺁﭖ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﮨﺪﯾﮧ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺁﺋﮯ۔ ﺍﻭﺭﻧﮓ ﺯﯾﺐ ﻋﺎﻟﻤﮕﯿﺮؒ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﯾﮧ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﭨﮑﮍﺍ ﻻﮐﮭﻮﮞ ﺩﯾﻨﺎﺭ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﺗﺐ ﺍﺱ ﮐﻮ ﭘﺘﮧ ﭼﻼ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﮐﺲ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎