Android AppiOS App

بہترین زندگی کے راز, اسپیشل نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


حکومت ڈیل چاہتی ہے ،وقت ایک جیسا نہیں رہتا،ن لیگ کے اہم رہنما مشاہداللہ خان نے حکومت کو خبردارکردیا

  ہفتہ‬‮ 16 فروری‬‮ 2019  |  12:59

مسلم لیگ (ن ) کے مرکزی رہنما سینیٹر مشاہد اللہ خان نے کہا ہے کہ حکومت ڈیل چاہتی ہے لیکن نواز شریف کسی صورت بھی حکومت کے ساتھ ڈیل نہیں کرنا چاہتے، نواز شریف آج نہیں تو کل جیل سے باہر ہوں گے،نوازشریف کے علاج کو ایشو نہیں بناناچاہیے،دو مرتبہ ان کا بائی پاس ہوچکاہے، اس لیے انکی مرضی کے مطابق علاج ہونا چاہیے ،یکطرفہ احتساب پاکستان کے عوام قبول نہیں کریں گے،عمران خان اپنی بہن علیمہ خان کے حوالے سے تفتیش کیوں نہیں کرواتے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے

سابق وزیر اعظم نواز شریف کی عیادت

کے لئے جناح ہسپتال آمد کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ انہوں نے کہا کہ نوازشریف پرجھوٹے مقدمات بنائے گئے ،عمران خان،عارف علوی،پرویزخٹک،بابراعوان،محمود خان کیخلاف تحقیقات اور انکوائریاں کیوں نہیں ہورہیں؟،وزیراعظم اپنے وزیروں سے مالم جبہ اور دیگر کیسز کے حوالے سے پوچھیں، عمران خان اپنی بہن علیمہ خان کے حوالے سے تفتیش کیوں نہیں کرواتے، احتساب سب کا ہونا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ جو لوگ کرپشن کرتے ہیں وہ ملک کو سنوارتے نہیں، نواز شریف اور شہباز شریف نے کوئی کرپشن نہیں کی، یہ لوگ نوازشریف سے استعفے کی بھیک مانگتے تھے۔نوازشریف نے 25جولائی کو الیکشن جیتا تھا مگر انہیں اپوزیشن میں بٹھایاگیا۔ڈیل اور ڈھیل کی یہ حکومت منت کر رہی ہے،

نواز شریف کہتا ہے کہ میں اس ڈھیل کو ٹھوکر پر رکھتا ہوں ،حکومت چاہتی ہے کہ نواز شریف ان کے ساتھ ڈیل کریں مگر نواز شریف کسی صورت بھی حکومت کے ساتھ ڈیل نہیں کرنا چاہتے،نوازشریف نے ڈیل یامفاہمت کرنی ہوتی تووہ وزیراعظم رہتا اورہٹتابھی نہیں بلکہ ابھی بھی وزیراعظم ہوتا،آج نہیں تو کل نواز شریف کی جیل سے باہر ہوں گے۔ مشاہد اللہ خان نے مزید کہا کہ حکومت بتائے روپے کی قدر کیوں گری ہے؟ ،چھ مہینے میں کتنے لوگوں کونوکریاں ملیں؟،چھ ماہ میں مکانات بنائے ہیں یا گرائے ہیں؟،غریب آدمی کا جینا مشکل کردیا گیا ہے،حکمرانوں نے 11ہزار ارب کا قرضہ لے لیا ہے ۔ہم پنڈی کے شیطان جہلم کے ڈبو اور لاہور کے نرگسی کوفتے کی طرح پیشگوئیاں نہیں کرتے ۔انہوں نے کہا کہ جنہوں نے سول نافرمانی کی تحریک چلائی وہ آج اقتدار میں ہیں ،امپائر کی انگلی سے جو اقتدار میں آئے آج وہ انگلی پھسل رہی ہے ۔بنی گالا کو تو نہیں گرایا

گیا لیکن پورے پاکستان میں غریبوں کے گھر گرا دیئے گئے۔انہوں نے کہا کہ ویلنٹائن ڈے اورلاہورکے حسین موسم میں شہبازشریف کی ضمانت جیسی بڑی خوشی ملی،شہبازشریف کی گرفتاری کادرد بھرا پہلوان کی بیجاگرفتاری ہے،شہبازشریف نے پنجاب کی بالخصوص بڑی خدمت کی، صوبہ کی ترقی کیلئے دن رات ایک کیا،شہبازشریف نے ملک اورصوبہ کے لئے ایسے ایسے کام کئے جس کی ملک بھرمیں نظیرنہیں ملتی،انہوں نے ملک وقوم کی ترقی کیلئے اپنی بیماری اوردیگرتکالیف بھلادیں لیکن ان کی خدمات کے اعتراف کی بجائے جیل میں

ڈال دیاگیا،اللہ جانے شہبازشریف کوکن ناکردہ گناہوں کی سزاد ی گئی۔ انہوں نے کہا کہ عدالت نے انصاف پرمبنی فیصلہ کیاہے اس پرپارٹی اورپنجاب کے عوام خوش ہیں۔ انہوں نے کہا کہ احتساب کے طریق کار میں بہت سی چیزیں اصلاح کے قابل ہیں،درست ہے سائیکل چوری کے الزام میں سالوں ضمانت نہیں ہوتی مگرالزامات سب پرہیں۔شہباز شریف کوالزامات پرجیل ڈالا مگریہاں توصدر ،وزیرعظم ،وزیراعلی خیبر پختوانخواہ سمیت آدھی سے زائد کابینہ پرالزامات ہیں،احتساب بلا امتیازہوناچاہیے ،انصاف اس کا نعرہ لگانے والوں کے قریب سے نہیں گزرا۔

انہوں نے کہا کہ نوازشریف نے ملک کاکیابگاڑاہے؟ اس کاجرم ہے کہ اس نے دہشتگردی اورملک سے اندھیرے ختم کئے،سی پیک، گوادرپورٹ بنانا ،گیس لوڈشیڈ نگ کاخاتمہ ،میٹروکی تعمیر اورموٹروے بنانانواز شریف کے جرائم ہیں۔نوازشریف پرایک پائی کی کرپشن نہیں،پانامہ کاجھوٹامقدمہ چلاکراقامہ پرسزادی گئی،یہ عالمی ایجنڈہ تھا کہ نوازشریف خطے میں چین کوکیوں لیکرآیا۔ نوازشریف بڑے دل گردے کامالک ہے جس کوبیمار بیوی کی تیماداری نہیں کرنے دی گئی۔دریں اثناء مسلم لیگ (ن) کے مرکزی رہنما سینیٹر مشاہد اللہ خان ،لاہور

کے صدر و رکن قومی اسمبلی پرویز ملک اور لارڈ میئر کرنل (ر) مبشر جاوید کو جناح ہسپتال میں زیر علاج محمد نواز شریف سے ملاقات کرنے سے روکدیا گیا ۔مشاہدا للہ خان ، پرویز ملک اور کرنل (ر ) مبشرجاوید جناح ہسپتال میں زیر علاج نواز شریف سے ملاقات کیلئے پہنچے تاہم ہسپتال انتظامیہ نے انہیں یہ کہتے ہوئے اجازت دینے سے انکار کر دیا کہ کسی کو بھی نواز شریف سے ملاقات کی اجازت نہیں ۔

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎