Android AppiOS App

بہترین زندگی کے راز, اسپیشل نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


پاکستان میں گاڑی والا ٹریفک والے کے پاس چل کر کیوں جاتا ہے؟

  ہفتہ‬‮ 11 مئی‬‮‬‮ 2019  |  17:56

ہمارے ملک میں قانون نافذ کرنے والوں کو بڑی عزت اور قدر کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے، کیونکہ یہی قانون کی ضمانت ہیں۔ اگر یہ نہ ہوں تو قانون ہی ختم ہوجائے۔ اسی لیے اگر یہ کہا جائے تو بے جا نہ ہوگا کہ یہ اپنی ذات میں خود مکمل قانون ہوتے ہیں۔ کالے کوٹ والے اکثر اسی بات پر کالی وردی والوں سے خاص کر الجھتے دکھائی دیتے ہیں۔ اب انہیں یہ بات کون سمجھائے کہ قانون کو قانون نہیں پڑھایا جاسکتا۔ اگر قانون ہی پڑھنا ہوتا تو

 وہ کالاکوٹ نہ پہن لیتے۔ہر قانون نافذ

کرنے والے ادارے کے اپنے اپنے فرائض ہیں لیکن یہ لوگ اپنے فرائض سے بڑھ کر کام کرنے پر یقین رکھتے ہیں۔ جہاں یہ لوگ کھڑے ہوں وہیں یہ قانون سمجھے جاتے ہیں۔ ان کی وردی کسی بھی رنگ کی ہو لیکن اگر سڑک پر ہاتھ دے دیں تو ٹریفک رْک جاتی ہے کیونکہ قانون کے ہاتھ لمبے ہوتے ہیں۔ ان کے پاس اختیار ہے کہ یہ آپ کی جامہ تلاشی سے لے کر شناختی کارڈ تک سب کچھ چیک کرسکتے ہیں۔ اگر آپ گاڑی پر ہیں تو گاڑی کے کاغذات سے لے کر لائسنس تک ہر چیز طلب کرسکتے ہیں۔ لیکن آپ کے پاس سوال کرنے کا حق نہیں ہے ۔انہیں یہ عادت ہوتی ہے کہ یہ کسی سوال کا جواب نہیں دیتے،

 کیونکہ سوال کا جواب دینا یہ اپنی توہین سمجھتے ہیں اور یہ بات تو سب ہی جانتے ہیں کہ قانون کبھی توہین برداشت نہیں کرتا۔ اگر یہ سڑک سے گزر رہے ہیں تو عوام کا فرض ہے کہ وہ ان کو راستہ دیں کیونکہ قانون ان کے ہاتھ میں ہے۔ اگر آپ نے ان کو راستہ دینے میں تاخیر کی تو آپ قانون کے راستہ میں رکاوٹ سمجھے جاسکتے ہیں اور قانون اپنے راستے میں آنے والی ہر رکاوٹ کو ہٹانا جانتا ہے۔پاکستان سے باہر ٹریفک پولیس والے گاڑی سے اتر کر گاڑی والے کے پاس جاتے ہیں اور پھر ہاتھ ملا کر چالان کرتے ہیں۔ لیکن پاکستان میں چونکہ قانون نافذ کرنے والوں کا بے حد احترام پایا جاتا ہے، اسی لیے عوام خود اتر کر ان کے پاس جاتے ہیں اور ہاتھ گرم کرکے چالان نہ کرنے کی اپیل کرتے ہیں، جو اکثر رحم دل قانون نافذ کرنے والے موقع پر ہی منظور کرکے قانون کو مزید الجھنوں سے بچا لیتے ہیں۔

 یوں معاملات موقع پر ہی رفع دفع کرلئے جاتے ہیں۔ کالی وردی والے اکثر سڑک کے کنارے اندھیرے میں کھڑے ہوکر جرم کی تلاش کرتے دکھائی دیتے ہیں، اور ہر آتے جاتے کو دیکھ کر اندازہ لگا لیتے ہیں کہ مجرم کون ہے۔ مجرم ان کے ساتھ تعاون نہیں کرتے لیکن یہ مجرم کے ساتھ مکمل تعاون کرتے ہیں۔ انہیں عوام سے شکایت ہے کہ وہ ان کے ساتھ تعاون نہیں کرتی۔ اگر وہ بھی تعاون کریں تو معاملات تھانہ تک پہنچنے سے پہلے ہی ختم کئے جاسکتے ہیں۔آج کل بیریئر آپ کو قانون نافذ کرنے والے اداروں کے باہر دکھائی دیں گے۔

اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ اگر خطرات لاحق ہیں تو وہ قانون نافذ کرنے والے اداروں کو ہیں، جن کو سیکورٹی کی اشد ضرورت ہے۔ عوام کا فرض ہے کہ وہ قانون نافذ کرنے والوں کی سیکیورٹی کو یقینی بنائیں۔دہشت گردی کی جنگ میں قانون نافذ کرنے والوں کی قربانیاں لازوال ہیں۔ انہوں نے کسی کو بھی قانون اپنے ہاتھ میں نہیں لینے دیا، کیونکہ قانون کو اپنے ہاتھ میں رکھنا صرف قانون نافذ کرنے والے اداروں کا کام ہے۔ کہتے ہیں کہ قانون اندھا ہوتا ہے اسی لیے قانون نافذ کرنے والے اداروں نے قانون کو اپنے ہاتھ میں لے رکھا ہے تاکہ قانون بھٹکنے نہ پائے۔