Android AppiOS App

بہترین زندگی کے راز, اسپیشل نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


گھر سے بھاگی ہوئی لڑکی

  جمعہ‬‮ 24 مئی‬‮‬‮ 2019  |  14:28

اس نے کانپتے ہاتھوں کے ساتھ نمبر ملایا . ٹرن ٹرن . آگے سے کھانستی ہوئی آواز نے فون اٹھایا “ھیلو” “ھیلو” کون اے ؟ کوئی بولدا ہی نئیں. اس نے کال ڈراپ کردی پھر چند لمحے بعد پھر ہمت کر کے کال ملائی پھر اسی آواز نے فون اٹھایا ھیلو کون اے؟ ہمت کر کے ڈرتے ڈرتے ھیلو کیا . آگے ایک دم سے آواز آئی “نازی” پتر توں؟؟؟؟ کیا حال ہے پتر. تو ہمیں چھوڑ کر کیوں چلی گئی پتر کیوں ماں باپ کی عزت خاک میں ملا دی .

 بھائی تیرے خون کے پیاسے

ہوے ہیں کہاں ہے تو.تو ٹھیک تے ہے نا پتر. کتھے آں تو؟ نازی کا رو رو کر برا حال تھا.. کچھ نا بولی اسکی ماں بولتی چلی گئی پوچھتی چلی گئی... لیکن نازی جیسے بے سدھ کھڑی رہی جیسے سکتے میں ہو.” پھر اماں کی طرف سے سوال ہوا پتر تو ہے کہاں اتنے سال ہوگئے تو خوش تے ہے ناں ؟ آخر ماں تھی ماں کی محبت تو ختم.نہیں ہوتی . نازی صرف اتنا بولی . ہاں امی” میں خوش ہوں” اتنے میں دروازے سے نازی کا شوہر گھر میں داخل ہوا نازی نے گھبراتے ہوے فون بند کیا اور ڈر سی گئی. شوہر نے داخل ہوتے ہی پوچھا کس سے فون پر لگی تھی

 میری غیر حاضری میں تم دوسرے مردوں سے گپیں لگاتی ہو . تم میرے ساتھ بھاگ کر آئی ہو کسی اور کے ساتھ بھی بھاگنے کا ارادہ ہے ؟بے اعتباری عورت......!!! گھر سے بھاگی ہوئی لڑکی کو ” جان نثار” کی والہانہ سچی محبت. “اندھے قانون”کی لاٹھی . “دنیا” کے ہر مذہب کی رضا “مجبور ” والدین” کی رضامندی . “غیرت مند” بھائیوں کا وقتی سمجھوتہ . ” یار دوستوں ” کی “دلی” خوشی اور “اپنے” ضمیر کی آواز کا اطمینان مل بھی جائے لیکن !!! اُسے ” عزت” کبھی بھی نہیں ملتی . اپنی ساری زندگی کی قیمت پر بھی نہیں.

 اپنی آنے والی نسلوں کے سامنے بھی نہیں. اسے صرف سمجھوتے کرنے ہوتے ہیں. وہ سمجھوتے جن سے فرار کے لیے اس نے یہ انتہائی قدم اٹھایا. زندگی کا یہ گول چکر اسے ساری زندگی گزار کر ہی سمجھ آتا ہے. ” عزت” دنیا میں سب سے قیمتی اور کم یاب شے ہے جو ہمیں دوسروں کے رویےاور اپنے دل کی آنکھ میں اپنے لیے ملتی ہے ” .

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎