بہترین زندگی کے راز, نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ

آسٹریلوی ساحل سے 132سال پرانی بوتل برآمد ،بوتل کو جب کھولا گیا تو اس میں سے ایک تحریر ملی ،یہ تحریر کس کیلئے تھی اور اسے کیوں بھیجا گیا تھا

  منگل‬‮ 17 اپریل‬‮ 2018  |  4:22

آسٹریلیا کے ساحل پر 132 سالہ قدیمی بوتل برآمد ہوئی ،بوتل کے اندر سے جرمن زبان میں تحریر ایک پیغام بھی ملا ہے۔ یہ بوتل ساحل کی ریت میں دھنسی ہوئی تھی۔اس تاریخی دریافت کا سہرا ایک آسٹریلوی خاتون کے سر ہے۔ ٹونیا اِلمین نامی یہ خاتون مغربی آسٹریلیا کے صوبائی دارالحکومت پرتھ سے 180 کلو میٹر شمال میں ’’ویج آئی لینڈ‘‘کے ساحل پر چہل قدمی کر رہی تھیں۔ٹونیا اِلمین نے بتایا یہ مجھے پرانی طرزکی ایک خوبصورت بوتل لگی۔ میں نے اسے یہ سوچ کر اٹھایا کہ میری کتابوں کے درمیان رکھی یہ اچھی لگے گی۔ میرے بیٹے کی

میرے بیٹے کی گرل فرینڈ نے جب بوتل سے ریت صاف کی تو اسے یہ تحریر لکھی نظر آئی۔ پیغام نم تھا اور ایک دھاگے میں لپٹا ہوا تھا۔ٹونیا اِلمین کا کہنا تھا کہ وہ لوگ اس بوتل کو گھر لے آئے۔ پیغام کو کھولا تو جرمن زبان میں کوئی مدھم سی تحریر ملی۔ یہ میسیج بارہ جون سن 1886 کو لکھا گیا تھا۔ کاغذ کی پشت پر تحریر تھا،’’ جس کسی کو بھی یہ پیغام ملے وہ اسے ہیمبرگ میں جرمن نیوی کی رصدگاہ یا پھر قریبی جرمن قونصل خانے پہنچا دے۔‘‘

مغربی آسٹریلین میوزیم کے ایک ترجمان نے جرمن خبر رساں ادارے کو بتایا کہ یہ بوتل اِلمین کو اکیس جنوری کو ملی تھی۔ویسٹرن آسٹریلین میوزیم نے ایک بیان میں یہ بھی کہا ہے کہ بوتل ایک جرمن جہاز ’پاؤلا‘ سے سمندر میں پھینکی گئی تھی۔ یہ عمل جرمن نیوی آبزرویٹری کے اس 69 سالہ تجرباتی منصوبے کا ایک حصہ تھا جو سمندری کرنٹ کو بہتر طور پر سمجھنے اور زیادہ تیز اور زیادہ کارآمد بحری راستوں کی تلاش کے لیے ترتیب دیا گیا تھا۔

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎