بہترین زندگی کے راز, اسپیشل نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


چُپ چُپ کیوں۔۔۔؟

  پیر‬‮ 19 مارچ‬‮ 2018  |  14:07

بچے خاموش طبیعت کے مالک ہوں تو اس میں کوئی برائی نہیں، مگر بعض بچوں کا بہت کم بولنا اور دوسرے لوگوں سے زیادہ گھل مل نہ پانا پریشانی کا سبب بن جاتا ہے۔

خاموش طبیعت اگر عادت بن جائے، تو بچے ’’سوشل فوبیا‘‘ کے شکار بھی ہو سکتے ہیں۔ سب سے پہلے تو ان اسباب کا پتا لگائیں کہ بچہ کم کیوں بولتا ہے۔ اس کا مزاج ایسا کیوں بن گیا ہے کہ اسے اظہار خیال میں دقت محسوس ہوتی ہے۔ بچہ شرم کے مارے کچھ نہیں بول رہا، بچے جیسے جیسے بڑے ہوتے ہیں قدرتی

طور پر بدلتے جاتے ہیں۔ اگر عمر کے ساتھ ساتھ تبدیلی نہیں آرہی ہے، تو غور کرنے کی ضرورت ہے۔

آج کل زیادہ تر بچے حاضر جواب اور ہر معاملے میں سرگرم ہوتے ہیں۔ ایسے میں بچے کا خاموش طبیعت ہونا اس کی ترقی میں رکاوٹ ہو سکتا ہے۔ خاموش طبیعت کی وجہ سے کئی بچے تنہائی پسند ہو جاتے ہیں۔ دل میں جو بھی سوالات ہوتے ہیں۔ ان کے بارے میں کھل کر نہ تو بتا پاتے ہیں اور نہ ہی سوال کرتے ہیں۔ یہ مسئلہ آگے چل کر ان کی پورے شخصیت کو متاثر کرتا ہے، اس لیے شروع سے ماں باپ ایسی باتوں پر غور کریں، یہ بہت ضروری ہے۔

بچوں میں خود اعتمادی پیدا کریں، انہیں بے وجہ ڈرائیں، نہ دھمکائیں، کیوں کہ والدین کے ایسے رویے کی وجہ سے بھی بچے اپنے خیالات کا کھل کر اظہار نہیں کر پاتے۔ وہ اپنے دل کی بات دل میں ہی دبا کر رکھتے ہیں۔ بات بات میں بچوں کو ٹوکنا اور انہیں ہر بار غلط ثابت کرنے سے بھی وہ اپنی باتیں، اپنی سوچ شیئر کرنا بند کر دیتے ہیں۔ دھیرے دھیرے ان کی یہ عادت ان کے رویے میں آجاتی ہے اور انہیں خاموش طبیعت کا مالک بنا دیتی ہے۔

خاموش رہنے والے بچے گھر، باہر کہیں بھی کسی سے بھی کھل کر بات نہیں کر پاتے اور دوسرے بچوں سے پیچھے رہ جاتے ہیں۔ قابل ہونے کے باوجود اظہار خیال نہ کر پانے کی وجہ سے وہ جلن اور حسد جیسی بیماری کا بھی شکار ہوجاتے ہیں۔

کئی بار گھر کا ماحول بھی بچوں کو خاموش طبیعت کا بنا دیتا ہے۔ بہت سے والدین ملازمت پیشہ ہیں۔ ایسے میں کئی بچے دن بھر گھر میں اکیلے ہی رہتے ہیں۔ ان کی عادت ہی نہیں رہتی کہ وہ کسی سے اپنے خیالات کا اظہار کریں۔ جب وہ بڑے ہوتے ہیں، تو بہتیری کوششوں کے باوجود وہ اپنے مزاج کو تبدیل نہیں کر پاتے۔ اس لیے جتنی جلد ممکن ہو سکے، ماں باپ کو ایسی باتوں پر توجہ دینا چاہیے، اگر آپ دونوں ملازمت پیشہ ہیں، تو بھی بچوں کے لیے وقت نکالنا چاہیے اور ان سے باتیں کرنی چاہئیں۔

بچوں کو کبھی بھی غصے میں غلط سلط نہ کہیں۔ انہیں غلط طریقے سے مخاطب نہ کریں، نہ ہی انہیں بات بات پہ سزا دیں۔ جو والدین اپنے بچوں کے ساتھ ایسا برتائو کرتے ہیں، وہ بچے بالکل چپ رہنے لگتے ہیں۔ وہ اپنی بات کہنے سے پہلے ہی والدین کے رد عمل کے بارے میں سوچ کر سہمے رہتے ہیں۔ بچے کوئی سوال کریں، تو عمر کے حساب سے انہیں صحیح بات سمجھانے کی کوشش کریں، انہیں ٹالنے یا غلط جواب دینے سے گریز کریں کیوں کہ اس طرح ان کو ملنے والی معلومات اگر الگ الگ اور گُم راہ کن ہوں گی تو وہ خاموش رہنا شروع کر دیں گے۔


loading...

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎