بہترین زندگی کے راز, نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


مجبور مرغا

  بدھ‬‮ 16 مئی‬‮‬‮ 2018  |  13:00

ﮐﺴﯽ ﺟﮕﮧ ﺍﯾﮏ ﻣﺮﻏﺎ ﺭﻭﺯﺍﻧﮧ ﻓﺠﺮ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺍﺫﺍﻥ ﺩﯾﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﮏ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ : ﺁﺝ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﮔﺮ ﺗﻮ ﻧﮯ ﭘﮭﺮ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﺫﺍﻥ ﺩﯼ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﯿﺮﮮ ﺳﺎﺭﮮ ﭘﺮ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﺍﮐﮭﺎﮌ ﻟﯿﻨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﺮﻏﮯ ﻧﮯ ﺳﻮﭼﺎ ﮐﮧ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﭘﮍ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﺴﭙﺎﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺣﺮﺝ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺷﺮﻋﯽ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﯾﮩﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺟﺎﻥ ﺑﭽﺎﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺍﺫﺍﻥ ﺩﯾﻨﺎ ﻣﻮﻗﻮﻑ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺟﺎﻥ ﺑﭽﺎﻧﺎ ﻣﻘﺪﻡ ﮨﮯ ۔ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﻋﻼﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮐﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﻏﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﮨﺮ ﺣﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﺫﺍﻥ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ

ﮨﯿﮟ، ﻣﯿﺮﮮ ﺍﯾﮏ ﮐﮯ ﺍﺫﺍﻥ ﻧﺎ ﺩﯾﻨﮯ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﻓﺮﻕ ﭘﮍﮮ ﮔﺎ ۔ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﻏﮯ ﻧﮯ ﺍﺫﺍﻥ ﺩﯾﻨﺎ ﺑﻨﺪ ﮐﺮﺩﯼ۔ ﮨﻔﺘﮯ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﮏ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﻮ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺁﺝ ﺳﮯ ﺗﻮ ﻧﮯ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻣﺮﻏﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﭩﮑﭩﺎﻧﺎ ﮨﮯ، ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﯿﺮﮮ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﻧﻮﭺ ﻟﯿﻨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺗﺠﮭﮯ ﻣﺎﺭﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ ۔ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﺗﺎ ﮐﯿﺎ ﻧﺎ ﮐﺮﺗﺎ، ﻣﺮﻏﮯ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻭﺿﻌﺪﺍﺭﯼ ﮐﻮ ﭘﺲ ﭘﺸﺖ ﮈﺍﻻ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﻏﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﭩﮑﭩﺎﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯾﺎ۔ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﮏ ﻧﮯ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﻮ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﻧﮯ ﮐﻞ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻣﺮﻏﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﻧﮉﮦ ﺩﯾﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﻧﺎ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﺠﮭﮯ ﭼﮭﺮﯼ ﭘﮭﯿﺮ ﺩﯾﻨﯽ ﮨﮯ ۔ ﺍﺱ ﺑﺎﺭ ﻣﺮﻏﺎ ﺭﻭ ﭘﮍﺍ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺍٓﭖ ﺳﮯ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ : ﮐﺎﺵ ﺍﺫﺍﻧﯿﮟ ﺩﯾﺘﺎ ﺩﯾﺘﺎ ﻣﺮ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﻮ ﮐﺘﻨﺎ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﻮﺗﺎ، ﺁﺝ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻄﺎﻟﺒﮧ ﺗﻮ ﻧﺎ ﺳﻨﻨﺎ ﭘﮍﺗﺎ۔ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻣﻌﺬﺭﺕ ﮐﮯ ﺳﺎتھ ! ﺍﺳﻼﻡ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺁﺝ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺣﺎﻟﺖ ﺍﺱ ﻣﺮﻏﮯ ﺟﯿﺴﯽ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﮨﮯ ، ﺍﻭﺭ ﺁﺝ ﺍﺱ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮨﻢ ﺳﮯ ﺍﻧﮉﮮ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﻟﺒﮯ ﮐﺌﮯ ﺟﺎﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ، ﺭﮨﮯ ﺳﮩﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﺳﮯ ﺩﺳﺘﺒﺮﺍﺩﺭ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﭼﺎﻟﯿﮟ ﭼﻼﺋﯽ ﺟﺎﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ ﮐﺎﺵ ﮨﻢ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﯽ ﺁﺫﺍﻥ ﺩﯾﺘﮯ ﺩﯾﺘﮯ ﻗﺮﺑﺎﻥ ﮨﻮﺟﺎﺗﮯ ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﺑﺎﻃﻞ ﻧﻈﺎﻡ ﮐﻮ ﮔﻠﮯ ﻧﮧ ﻟﮕﺎﺗﮯ۔ ﮨﻢ ﺳﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﻣﺮﻏﺎ ﺍﭼﮭﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﺴﮯ ﯾﮧ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﺗﻮ ﮨﻮﺍ، ﮨﻤﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﮏ ﯾﮧ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﺳﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﻧﮧ ﮐﺒﮭﯽ ﺁﯾﺎﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ ۔

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎