Android AppiOS App

بہترین زندگی کے راز, اسپیشل نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


دائش اور پاکستان

  منگل‬‮ 22 مئی‬‮‬‮ 2018  |  13:46

کبھی آپ نے غور کیا کہ چند ماہ پہلے اچانک بڑی تیزی کے ساتھ داعش پاکستان میں قدم جمارہی تھی. کراچی، اسلام آباد اور ملک کے دیگر بڑے شہروں میں داعش کی حمایت میں وال چاکنگ، پمفلٹ ہوں، یا بینرز ہو یا سوشل میڈیا پہ داعش کے حوالے سے تشہیر، پرنٹ میڈیا، الیکٹرانک میڈیا سب ہی داعش کے پاکستان میں بڑی تیزی سے پھیلتے نیٹ ورک پہ ایک خوف وہراس کا سا سما پیدا کیاہوئے تھے اور واقعی نہایت ہولناک صورتِ حال تھی کیونکہپاکستان ابھی ٹی ٹی پی کے خلاف بھی کاروائیاں کررہا تھا اس صورتحال میں داعش کا پاکستان

میں اس قدر تیزی سے پھیلنا پاکستان کے لیے کسی دھچکے سے کم نہ تھا. روز ہی سننے میں آرہا تھا کہ فلاں داعش سے متاثر نکلا فلاں داعش کا کارکن نکلا. غرض صورتحال ٹی ٹی پی سے کہیں ذیادہ خطرناک تھی. اس دوران پاکستان کی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی ایک بار پھر دفاعِ وطن کے لیے داعش کے خلاف ایک مشن لیے داعش میں سرایت کرنے کو تیار تھی.ہوا یوں کہ داعش کی جانب سے پاکستان میں موجود کچھ اپنے آلہ کاروں کو ہدف دیا گیا کہ پاکستان کے مختلف علاقوں سے نوجوانوں کو داعش میں شامل کرنے کےلیے بھرتی کیا جائے. اسی مقصد کےلیے سوشل میڈیا پر بڑے پیمانے پہ کمپین چلائی گئی، داعشی لٹریچر پھیلایا جانے لگا. نوبت یہاں تک آگئی کہ اگر اسے نہ روکا جاتا تو یہ ظالمان سے ذیادہ تیزی سے تباہی کاسبب بنتے.ایسے میں ایک بار پھر پاکستان کے گمنام بیٹے سرگرم ہوئے اور اس شیطانی جماعت کا قلع قمع کرنے منصوبہ بنایا . آئی ایس آئی نے سب سے پہلے ان چند لوگوں کی تلاش شروع کی جو پاکستان میں داعش کے لیے سرگرم تھے. چند ہفتوں کی محنت کے بعد آئی ایس آئی ان لوگوں تک پہنچ گئی اور انہیں اس بات کا یقین دلایا کہ وہ داعش میں شمولیت کے خواہشمند ہیں اور جہاد کے لیے خود کو وقف کرنا چاہتے ہیں. پوری جانچ پڑتال اور تسلی کے بعد انہیں منظوری دے دی گئی.داعش میں شامل ہونے والوں نے انہیں چند کاروائیوں کے ذریعے اس بات کی یقین دہانی کرادی کے وہ افراد پاکستان میں کاروائیوں کے لیے موزوں ثابت ہونگے. ان افراد نے انہیں مزید نفری فراہم کرانے کی نہ صرف یقین دہانی کرائی بلکہ اپنے اپنے ذرائع سے مختلف علاقوں سے نوجوان فراہم کیے. جب داعشی آلہ کاروں کا ان پہ یقین پختہ ہوچکا تو انہیں بیرون ملک نامعلوم مقام پر ٹریننگ کرنے کے لیے بھیجا گیا جس کا مقصد تھا کہ یہ سب واپس آکر ایک ایک علاقے کامکمل کمانڈ سنبھالے کے قابل ہوجائیں. یہ تعداد میں 60 نوجوان تھے جو اپنی زندگی کا سب سے بڑا رسک لینے جارہے تھے اگر کسی کو ان پہ رتی برابر بھی شک ہوجاتا تو سارے ہی جان سے جاتے اور یہ پاکستان کے لیے بھی کہیں بڑا رسک بن جاتا.خیر ان نوجوانوں کو باہر ملک بھیجا گیا جہاں ان کے آنے جانے، کھانے پینے ہر ضرورت کا خرچہ داعش ہی برداشت کررہا تھا. پاکستان میں موجود آلہ کاروں پہ بھی آئی ایس آئی کی جانب کڑی نظر رکھی جارہی تھی. جو لوگ پاکستان سے باہر ٹریننگ پہ تھے وہ لوگ چند ماہ کڑی ٹریننگ اور بہت حد تک خفیہ معلومات لےکر پاکستان واپس پہنچے. ان افراد نے پہلی بار اس بات کا انکشاف کیا کہ داعش کو ٹریننگ، جاسوسی اور مالی طور پہ سی آئی اے ہی ہنڈل کررہی ہے اور انہیں سی آئی اے ہی پاکستان میں داخل کرنا چاہ رہی ہے. مزید معلومات کے مطابق انہیں 60 کے قریب لیپ ٹاپ جن میں جہادی و فسادی لٹریچر، پاکستان میں نوجوانوں کو تربیت دینے کے حوالے سے معلومات اور سب سے اہم ان لوگوں کی پوری معلومات موجود تھی جو پاکستان میں داعشی تنظیم کے سہولت کار اور داعش کے اعلیٰ عہداران تھےاور پاکستان میں داعش کو پروان چڑھانے پہ معمور تھے.وہ 60 نوجوان جو اصل میں پاکستان آئی ایس آئی سے تعلق رکھتے تھے انہوں نے یہ ساری معلومات آگے پیش کی جسکی بنیاد پہ پاکستان میں داعش کے بہت بہت بڑے بڑے عہدیدران کو گرفتار کیا گیا، سہولت کاروں کا سراغ لگاکر انہیں بھی گرفتار کیا گیا اور تقریباً تمام نیٹ ورک کو جڑ سے اکھاڑ پھینکا گیا الحمدللہ اس طرح اللہ کے فضل سے پاکستان کے گمنام بیٹوں نے انتہائی کٹھن، پرخطر اور جان لیوا حکمت عملی اپنا کر اپنے پاک وطن کو دشمنوں کے ناپاک عزائم سے محفوظ کردیا. یہ واقعہ کبھی منظرِ عام پر نہیں آیا لیکن ان پاک وطن کے عظیم بیٹوں کو سلام اور ان پہ بھونکنے والوں کے منہ پہ ایک تھپڑ رسید کرنا تھا تو آپ دوستوں تک یہ مشن شئیرکررہا ہوں کہ ملکی سلامتی کی خاطر یہ دیوانے کس حد تک جاسکتے ہیں.

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎