بہترین زندگی کے راز, نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


فحش مواد کس طرح معاشرے میں برائیوں کا سبب بنتا ہے؟ برطانوی لڑکی نے اپنے اغوا اور جنسی تشدد کی کہانی سنا کر بڑا پیغام دیدیا (ایک اصلاحی واقعہ)

  پیر‬‮ 9 جولائی‬‮ 2018  |  14:59

برطانیہ میں اغواءکے بعد 9ماہ تک ایک درندہ صفت انسان کی زیادتی کا نشانہ بننے والی لڑکی نے ایک ویڈیو میں ایسا تشویشناک انکشاف کر دیا ہے کہ پوری دنیا سوچنے پر مجبور ہو گئی ہے۔برطانوی اخبار ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق الزبتھ سمارٹ نامی لڑکی کو 2002ءمیں برین ڈیوڈ نامی شخص نے اس کے گھر سے اغواءکیا۔ اس وقت الزبتھ کی عمر محض 14سال تھی۔ الزبتھ نے فحش فلموں کے خلاف ایک مہم کے سلسلے میں اپنی 5منٹ کی ایک ویڈیو جاری کی ہے جس میں اس نے اپنے ساتھ پیش آنے والے واقعے کو تفصیل سے بیان

کیا ہے۔الزبتھ نے ویڈیو میں بتایا کہ ”برین ڈیوڈ نے مجھے میرے گھر سے اس وقت اغواءکیا جب میں اپنے بیڈ روم میں تھی۔ وہ مجھے لے گیا اور 9ماہ تک قید رکھا۔ اس دوران وہ فحش فلمیں دیکھ کر مجھے زیادتی کا نشانہ بناتا تھا۔ ہر بار اس کی درندگی میں اضافہ ہوتا جاتا ہے۔ میں اپنے اغواءکا ذمہ دار فحش فلموں کو گردانتی ہوں کیونکہ انہی کی وجہ سے برین نے مجھے اغواءکیا۔وہ یہ فلمیں دیکھ کر اپنی بیوی کے پاس جاتا تھا مگر اس کے لیے اس کی بیوی کافی نہیں تھی لہٰذا اس نے مجھے اغواءکر لیا۔فحش فلمیں دیکھ کر وہ اس قدر وحشی ہو جاتا کہ اسے ہمیشہ پہلے سے کچھ زیادہ چاہیے ہوتا تھا۔“رپورٹ کے مطابق الزبتھ 9ماہ تک اس شخص کی قید میں رہنے اور جنسی زیادتی کا نشانہ بننے کے بعد ایک بار پھر اپنے خاندان میں واپس جانے میں کامیاب ہو گئی۔تب سے وہ خواتین کے خلاف جنسی جرائم اور فحش فلموں کے انسداد کے لیے سرگرم ہے۔ الزبتھ کا کہنا تھا کہ ”مجھے خود اس چیز کا تجربہ ہے کہ جنسی زیادتی کس طرح زندگی برباد کرتی ہے اور فحش فلمیں کس طرح ہمارے معاشرے میں اس جرم کو فروغ دے رہی ہیں۔ جب میں اس کے چنگل سے نکل کر واپس آئی تو میں نے اس برائی کے خلاف کام کرنے کا فیصلہ کر لیا۔“

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎