بہترین زندگی کے راز, نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ

حقیقی چیمپئن

  منگل‬‮ 10 جولائی‬‮ 2018  |  14:46

چار سال کی عمر میں وہ سڑک پر گرا اور اس کے بائیں بازو کی نشوونما رک گئی‘ اس کا بایاں بازو موٹائی‘ چوڑائی اور لمبائی میں دائیں سے چھوٹا رہ گیا‘ وہ بائیں ہاتھ سے چیزیں پکڑ لیتا تھا‘ وہ اس ہاتھ کی انگلیوں سے چھوٹی موٹی چیز اٹھا اور کھول بھی سکتا تھا لیکن جہاں وزن زیادہ ہو جاتا تھایا پھر زیادہ زور لگانا پڑتا وہاں اس کا بایاں بازو بے بس ہو جاتا تھا اور وہ بیچارگی سے اس بازو کی طرف دیکھ کر رہ جاتا تھا. دس سال کی عمر میں اس نے جوڈو کا فیصلہ

کیا‘ وہ جوڈو کے ایک کلب میں گیا‘ استاد نے اس کا بازو دیکھااور فوراً انکار میں سر ہلا دیا‘وہ دوسرے کلب چلا گیا لیکن وہاں سے بھی اسے جواب مل گیا.وہ مایوس ہوگیا لیکن اس نے جدوجہد جاری رکھنے کا فیصلہ کیا‘ وہ دوسرے کے بعد تیسرے اور تیسرے کے بعد دسویں کلب کی سیڑھیاں چڑھتا اور اترتا چلا گیا لیکن کامیابی نہ ہوئی لیکن پھر ایک شام اسے استاد مل گیا‘ استاد کا نام ’’سن سی‘‘ تھا‘ سن سی نے اس کا سوکھا ہوا بازو دیکھا‘ ذرا دیرسوچا اور مسکرا کر بولا ’’تم جوڈو سیکھ سکتے ہو لیکن تمہیں ذرا سی زیادہ محنت کرنا پڑے گی‘‘. وہ استاد کے سامنے جھکا ‘ اس نے ’’زیادہ محنت‘‘ کا حلف اٹھایا اور یوں جوڈو اور استاد سن سی کے ساتھ اس کا نہ ختم ہونے والا تعلق پیدا ہو گیا. یہ جاپان کے ایک جوڈو چیمپئن کی کہانی ہے‘ اس چیمپئن نے ’’اوساکا‘‘ شہر میں آنکھ کھولی تھی اور میں پچھلی سطروں میں بتا چکا ہوں‘یہ شخص بچپن سے ایک بازو سے ذرا سا معذور تھا اور وہ اس معذوری کے ساتھ جوڈو نہیں سیکھ سکتا تھا لیکن پھر اسے ’’سن سی‘‘ جیسا استاد مل گیااورسن سی نے اس کی تربیت شروع کی اور وہ سن سی کے دئیے اسباق سیکھتا چلاگیا‘ وہ جب برائون بیلٹ تک پہنچا تو ایک دن اسے معلوم ہوا اس کے استاد نے اب تک صرف ایک ’’موو‘‘ سیکھائی ہے ‘وہ اپنے حریف کو صرف دائیں جانب سے پکڑنے اور اٹھا کر پھینکنے کا ماہر تھا‘وہ دل گرفتہ ہوا‘اس نے استاد سے وجہ پوچھی ‘ اس کا کہنا تھا ’’میرے ساتھی دونوں بازوئوں سے ’’مووز‘‘ کر سکتے ہیں لیکن آپ نے مجھے صرف دائیں بازو کی مووز سکھائیں‘ میں بائیں بازو سے بھی موو کرنا چاہتا ہوں‘‘ استاد نے قہقہہ لگایا اور اس کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر جواب دیا ’’بے وقوف بچے اللہ تعالیٰ نے تمہیں بائیں بازو کی کمزوری کی شکل میں بہت بڑی نعمت سے نوازا ہے‘ تم صرف ایک مووسے چیمپئن بن سکتے ہو‘ تم اپنی پریکٹس جاری رکھو دنیا تمہارے معذور بازو کی پرستشکرے گی‘‘ اس کیلئے استاد کی بات عجیب تھی‘ وہ دل سے اس بات کو ماننے کیلئے تیار نہیں تھا لیکن مارشل آرٹ میں استاد کا کہا حرف آخر ہوتا ہے چنانچہ وہ خاموش ہوگیا‘ اس نے ادب سے سر جھکایا اور اپنی واحد ’’موو‘‘ کو بہترسے بہتربنانے میں مصروف ہوگیا. سترہ سال کی عمر میں وہ پہلی بار ’’رِنگ‘‘ میں اترا‘ یہ آل جاپان جوڈو چیمپئن شپ کا مقابلہ تھا‘ وہ ’’رِنگ‘‘ میں آیا اور اس نے چند ہی لمحوں میں اپنے حریف کو چاروں شانے چت کر دیا‘ دوسرا مقابلہ ذرا سا سخت تھا لیکن وہ یہ مقابلہ بھی جیت گیا‘ تیسرا مرحلہ آیا تو وہ دیکھتے ہی دیکھتے اسمرحلے سے بھی گزر گیا‘ اس دوران جاپان کے سارے میڈیا پر اس کی خبریں اور رپورٹیں چلنے لگیں‘ وہ یہ خبریںاور رپورٹیں دیکھتا تو اس کا سیروں خون بڑھ جاتا. وہ اوساکا سے نکلا اور ٹوکیو پہنچ گیا‘ ٹوکیو میں اس کا سیمی فائنل تھا‘ سیمی فائنل شروع ہوا اور وہ یہ میچ بھی جیت گیا‘ یوںوہ جاپان کا پہلا جوڈو پلیئر بن گیا جو صرف ایک ’’موو‘‘ کے ذریعے کامیاب ہوتا چلا جا رہا تھا‘ یہ جوڈو کی تاریخ کی بہت بڑی کامیابی تھی لیکن ابھی آخری مرحلہ باقی تھا‘ ابھی چیمپئن کا فائنل میچ ہونا تھا اور اگر وہ ایک بار یہ میچ بھی جیت جاتا تو جوڈو کی تاریخایک نئے دور میں داخل ہو جاتی. اس کا فائنل جوں جوں نزدیک آتا جا رہا تھا وہ نروس ہوتا جا رہا تھا‘ وہ جب بھی اپنے استاد سے اس نروس نس کے بارے میں بات کرتا تو ’’سن سی‘‘ مسکرا کر اپنا منہ دوسری طرف پھیر لیتاتھا جس سے اس کی گھبراہٹ میں اضافہ ہوجاتا لیکن اس کے پاس فائنل میچ کھیلنے کے سوا کوئی چارہ نہیں تھا. اسی گھبراہٹ اور نروس نس میں فائنل کا وقت ہو گیا‘ وہ جب رِنگ میں اترنے لگا تو ’’سن سی‘‘ اس کے قریب آیا‘ اس کا ماتھا چوما اور اس کے کان پر جھک کر بولا ’’اگر تم آج ہار گئے تو ثابت ہو جائے گا دنیا کا کوئی معذورشخص جوڈو نہیں سیکھ سکتا‘ آج دنیا کے تمام معذور بچے تمہاری جیت کا انتظار کررہے ہیں‘‘ اس نے پریشانی کے عالم میں استاد کی طرف دیکھا اور رِنگ میں کود گیا‘ یہ میچ بہت مشکل تھا‘ اس کا مقابلہ ایک ایسے شخص کے ساتھ تھا جو عمر‘ تجربے اور طاقت میں اس سے کئی گنا بھاری اور بڑا تھا اور یہ شخص پچھلے تین برسوں سے چیمپئن بھی چلا آرہا تھا‘ میچ کے ابتدائی رائونڈ میںیوں محسوس ہوتا تھا وہ یہ میچ ہار جائے گا لیکن تیسرے رائونڈ میں اس کے حریف نے ایک سنگین غلطی کی اور اس نے اسے اٹھا کر نیچے پٹخ دیا‘ حریف نے اٹھنے کیکوشش کی لیکن وہ نہ اٹھ سکا اور یوں جاپان کی تاریخ میں پہلا معذور کھلاڑی جوڈوچیمپئن بن گیا‘ وہ جوڈو کی نئی تاریخ کا بانی تھا. وہ ’’سن سی‘‘ کے ساتھ سٹیڈیم سے نکلا اور راستے میں اس نے استاد سے پوچھا ’’استاد میں چیمپئن کیسے بن گیا‘‘ سن سی نے قہقہہ لگایا اور اپنے لمبے گھنگھریالے بالوں پر ہاتھ پھیر کر بولا ’’صرف اور صرف اپنی معذوری کے ذریعے‘‘ وہ غور سے اپنے استاد کی طرف دیکھتا رہا‘ استاد بولا ’’تم بائیں بازو سے معذور تھے لہٰذا تم جانتے تھے تمہارے پاس صرف دایاں بازو ہے اور تم نے صرف اور صرف اس بازو کی مدد سےزندگی کی بازی جیتنی ہے چنانچہ مقابلے کے دوران تم اپنی ساری قوت دائیں بازو میں منتقل کر دیتے تھے جبکہ تمہارے حریف کی قوت دو بازوئوں میں تقسیم ہوتی تھی. نمبر دو‘ تمہارے حریف جانتے تھے تمہارا بایاں بازو کمزورہے لہٰذا وہ ہمیشہ تمہارے بائیں طرف اٹیک کرتے تھے اور وہ حملے کے دوران یہ فراموش کر بیٹھتے تھے تم دائیں بازو کی ’’موو‘‘ کے ماہر ہو چنانچہ وہ جوں ہی تمہاری بائیں جانب اٹیک کرتے تھے تم انہیں اپنے دائیں بازو میں الجھاتے تھے اور اٹھا کر نیچے پھینک دیتے تھے‘‘ استادرکا اور مسکرا کر بولا ’’میرے بچے تمہاریکمزوری ہی بنیادی طور پرتمہاری سب سے بڑی طاقت تھی اور یاد رکھو قدرت جب کسی انسان کو کسی جانب سے معذور بناتی ہے تو وہ اسے دوسری جانب سے ’’کمپیٹنٹ‘‘ کر دیتی ہے‘ وہ اس کے کسی دوسرے عضو کو زیادہ طاقتور اور مضبوط بنا دیتی ہے اور تمہارے دائیں بازو میں تمہارے بائیں بازو کی قوت بھی موجودتھی لہٰذا تم جیت گئے‘‘ اس نے غور سے استاد کو دیکھا ‘ وہ جھکا اوردائیںہاتھ سے اپنے استاد کے پائوں چھوئے اور یہ ہاتھ اپنے بائیں بازو پر رگڑنا شروع کر دیا‘ اسے اس دن اپنے بائیں بازو کی معذوری پر بڑا پیار آ رہا تھا. میں نے یہکہانی بچپن میں پڑھی تھی‘ مجھے ابھی تک یاد ہے میں یہ کہانی پڑھ کر اپنے والد کے پاس جا کر بیٹھ گیا تھا‘ میرے والد ایک نیم پڑھے لکھے شخص ہیں‘ ان کا تعلیمی سلسلہ دوسری جماعت میں پہنچ کر رک گیا تھا‘ وہ بمشکل دستخط کر سکتے ہیں یا چھوٹی موٹی رقمیں جمع تفریق کر سکتے ہیں لیکن اس کے باوجود انہوںنے کاروبار کیا اور زندگی میں لاکھوں‘ کروڑوں روپے کمائے‘ وہ ہر مہینے دس‘ بیس اور پچاس لاکھ روپے تک کا لین دین کرتے تھے‘ پانچ چھ بینکوں میں ان کے اکائونٹس تھے لیکن وہ یہ حساب کتاب کسی جگہ نہیں لکھتے تھے ‘ یہ سب فگر‘یہ سارے اکائونٹس ان کے دماغ میں رہتے تھے ‘ میں نے اس دن ان سے پوچھا تھا ‘وہ یہ سب کچھ کیسے ’’مینج‘‘ کرلیتے ہیں‘ انہوں نے پنسل سے کاغذ پر لکیر کھینچی تھی اور فرمایاتھا ’’میں جانتا ہوں میں ان پڑھ ہوں اور میں لین دین کا حساب کتاب نہیں رکھ سکتا چنانچہ میں کاغذ اور پنسل کا کام اپنے دماغ سے لیتا ہوں‘ میں چھوٹی سی چھوٹی رقم کو اپنی یادداشت کا حصہ بنا لیتا ہوں‘ میری یہ یادداشت میری طاقت ہے‘ اگر میں پڑھا لکھا ہوتا تو میں کتابوں اور کھاتوں کا محتاج ہوتا اور شائد اتنا کامیاب نہ ہو سکتا‘‘ مجھے اس وقت اندازا ہوا ہم لوگ جس چیز کواپنی خامی‘ اپنی کمزوری اور اپنی معذوری سمجھتے ہیں وہ بنیادی طو رپر ہماری طاقت‘ ہماری خصوصیت ہوتی ہے‘ بس ہم نے اس معذوری اور اس خامی کا کوئی متبادل تلاش کرنا ہوتا ہے. دنیا میں جو لوگ اپنی خامیوں اور اپنی معذوریوں کا متبادل تلاش کر لیتے ہیں ‘ جو لوگ اپنے جسم کی کسی اضافی خوبی یا طاقت تک پہنچ جاتے ہیں وہ کامیاب ہو جاتے ہیں اور جو لوگ اپنی اضافی خوبی ڈسکور نہیں کرپاتے‘ جو اللہ کی نعمت اور خصوصیت تک نہیں پہنچ پاتے‘ وہ زندگی بھر اپنی خامیوں اور معذوریوں پر آنسو بہاتے رہتے ہیں اور یوں زندگی کی دوڑ میںپیچھے رہ جاتے ہیں. کل شام ایک نوجوان میرے پاس آیا اور مجھ سے کہنے لگا ’’میں بہت غریب ہوں‘‘میں نے قہقہہ لگایا اور اس سے عرض کیا ’’تم غریب نہیں ہو‘ تم بے وقوف ہو‘‘ اس نے غصے سے میری طرف دیکھا ’’میں نے عرض کیا بے وقوف شخص دنیا کا ہر کامیاب انسان کبھی غریب تھا‘ غربت وہ طاقت ہوتی ہے جو انسانوں کو کامیابی تک لے جاتی ہے اور تم اپنی اصل طاقت کو معذوری سمجھ رہے ہو‘‘.وہ چپ چاپ چلا گیا‘ وہ شائد میرے ساتھ خفا تھا۔ 

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎