بہترین زندگی کے راز, اسپیشل نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


سابقہ ماڈل کوسیکڑوں کیڑوں نے زندہ کھا لیا

  جمعرات‬‮ 26 جولائی‬‮ 2018  |  18:13

سابقہ ماڈل،ریبیکا زینی  جورجیا کے نجی ہسپتال میں  زیر علاج تھیں جس کے بعد سیکڑوں کیڑوں نے انھیں زندہ کھا لیا۔  فوکس نیوز  کے مطابق زینی کھجلی انفیکشن کی مرض تھیں   جبکہ لاش کا طبی معینہ کرنے پر پتہ لگا کہ ان کی موت سیپٹیسیمیا،  خارش کرنے کی وجہ سے ہوئی۔ رپورٹ کے مطابق ہسپتال کے انتظامیہ کو پہلے ہی بتایاگیا تھا کہ  مریض کو  کھجلی کی بیماری ہے پر اس کے باوجود انہوں نے ہسپتال کا جائزہ نہ لیا اور زینی کو ہسپتال میں  داخل کروادیا گیا۔آپ کو بتاتے چلے یہ ایک ایسی بیماری ہے جس میں چھوٹے چھوٹے کیڑے آپ کی

جلد کی سطح پر انڈے  دیتے ہیں جس کے بعد سیکڑوں کی تعداد میں یہ کیڑے جسم میں پھیلتے ہیں جس کی وجہ سے بعد میں انسان کے پورے جسم میں خارش نمودار ہوتی ہے۔بہت سے لوگ زینی کو نہیں جانتےپر ہم آپ کو بتاتے چلے کہ ز ینی  اپنی چھوٹی عمر سے  ہی نیو یارک  اور چیکاگو میں موڈل اور ٹی وی اداکارہ  کا کام کرتے آئی ہیں۔زینی  2010 میں ڈمنشیا کی بیماری کی وجہ سے  ہسپتال میں منتقل کردی گئی تھیں جبکہ اب ان کے خاندان والے  ہسپتال کے خلاف ہلاکت کا مقدمہ درج کرواچکے ہیں۔زینی کی مرنے سے پہلے لی جانے والی تصاویر میں دیکھا جاسکتا ہے کہ ان کا پورا چہرا کالا دکھائی دے رہا تھا۔ زینی کے وکیل نے  ہسپتال کے  عملہ پر الزام لگاتے ہوئے یہ بھی کہا کہ ہسپتال کے انتظامیہ نے مریض کے ہاتھ کو چھونے  سے بھی انکار کردیا تھا۔وکیل کا کہنا تھا کہ ‘زینی کا علاج کرتے ہوئے ہیلتھ کیئر کی ہسپتال  کے عملہ سے گفتگو جاری تھی جہاں انہیں زینی کے ہاتھ کو چھونے سے منع کیا گیا کہ کہی ان کا ہاتھ جسم سے الگ نہ ہوجائے۔’ماہر  علم الاامراض  ڈاکٹر کرس اسپیری نے جب زینی کا پوسٹ مارٹم کیا اور ان سے اس متعلق پوچھا گیا تو انہوں نے کہا کہ 6000 پوسٹ مارٹم میں سےپہلی بار میں  نے اپنے کیرئیر میں  اتنی خوفناک  موت کا جائزہ لیا ہے


دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎