بہترین زندگی کے راز, اسپیشل نفسیاتی مسائل کا حل , اپنی صحت بہتربنائیں, اسلام اورہم, ترقی کےراز, عملی زندگی کےمسائل اورحل, تاریخ سےسیکھیئے, سماجی وخاندانی مسائل, ازدواجی زندگی بہتربنائیں , گھریلومسائل, روزمرہ زندگی کےمسائل, گھریلوٹوٹکے اسلامی واقعات, کریئر, کونساپیشہ منتخب کریں, نوجوانوں کے مسائل , بچوں کی اچھی تربیت, بچوں کے مسائل , معلومات میں اضافہ , ہمارا پاکستان, سیاسی سمجھ بوجھ, کالم , طنز و مزاح, دلچسپ سائینسی معلومات, کاروبار کیسے کریں ملازمت میں ترقی کریں, غذا سے علاج, زندگی کےمسائل کا حل قرآن سے, بہترین اردو ادب, سیاحت و تفریح, ستاروں کی چال , خواتین کے لیے , مرد حضرات کے لیے, بچوں کی کہانیاں, آپ بیتی , فلمی دنیا, کھیل ہی کھیل , ہمارا معاشرہ اور اس کی اصلاح, سماجی معلومات, حیرت انگیز , مزاحیہ


22سالہ لڑکی کو اغواءاور پھر مبینہ زیادتی کا معاملہ ، فوٹیج سامنے آ گئی ، اس میں لڑکی کس طرح آ رہی ہے ؟ کہانی نیا رخ اختیارکر گئی

  جمعرات‬‮ 24 ستمبر‬‮ 2020  |  15:57

)کراچی کے علاقے کلفٹن سے مبینہ اغواءاور زیادتی کا شکار ہونے والی لڑکی کے کیس کی تحقیقات جاری ہیں، جس فلیٹ میں دو ملزمان نے مبینہ طور پر لڑکی کو زیادتی کا نشانہ بنایا اس کے چوکیدار کو پولیس نے تفتیش کے لیے حراست میں لے لیا ہے۔

نجی ٹی وی جیونیوز کے مطابق تفتیشی حکام نے بتایا کہ متاثرہ لڑکی دیگر خواتین کے ہمراہ رات ساڑھے نو بجے کلفٹن کے مال سے نکلی، لڑکی کے بیان کے مطابق ملزمان اس کو زبردستی اپنے ساتھ لے گئے اور دو گھنٹے بعد وہیں لاکر چھوڑ دیا۔حکام کے مطابق

اب تک کی تحقیقات میں ملزمان کی جانب سے لڑکی کو زبردستی لے جانے کے شواہد نہیں ملے، سی سی ٹی وی میں دیکھا جاسکتا ہے کہ متاثرہ لڑکی خود چلتے ہوئے واپس آرہی ہے۔

مبینہ اجتماعی زیادتی کا دعویٰ کرنے والی 22 سالہ خاتون کی میڈیکل رپورٹ بھی آگئی ہے ،پولیس سرجن ڈاکٹر کرار عباسی بتاتے ہیں کہ خاتون اور ان کے کپڑوں سے نمونے لے کر کیمیکل ایگزامینیشن کے لیے بھیج دیے گئے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ متاثرہ لڑکی کے بازو پر ایک زخم ہے لیکن لگتا ہے کہ وہ خود لگایا گیا ہے۔تفتیشی حکام کے مطابق دونوں مرکزی ملزمان کا تعلق جیکب آباد سے ہے اور انھوں نے ڈیفنس خیابان راحت میں ایک فلیٹ کرائے پر لے رکھا ہے جہاں متاثرہ لڑکی کو لےجایا گیا تھا، ملزمان کے نام عبداللہ کھوسو، قادر کھوسو اور نظر کھوسو ہیں۔تفتیشی حکام نے بتایا کہ عبداللہ اور قادر مرکزی ملزمان ہیں جن پر اجتماعی زیادتی کا الزام ہے جب کہ نظر ان کا باورچی ہے اور اس پر سہولت کاری کا الزام ہے۔

پولیس کے پاس ملزمان کے موبائل فون نمبرز ہیں اور رات گئے تک ملزمان کراچی میں موجود تھے تاہم ساوتھ زون پولیس کے لوکیٹرز خراب ہونے کے باعث ملزمان گرفتار نہیں کیے جاسکے، اس فلیٹ پر بھی چھاپہ مارا گیا اور ملزمان کے نہ ملنے پر چوکیدار کو تفتیش کیلئے حراست میں لے لیا گیاہے۔


انٹرنیٹ کی دنیا سے ‎‎

دن کی زیادہ پڑھی گئیں پوسٹس‎